سُنا تو ہے کہ نگارِ بہار راہ میں ہے

سُنا تو ہے کہ نگارِ بہار راہ میں ہے
سُنا تو ہے کہ نگارِ بہار راہ میں ہے

  

سُنا تو ہے کہ نگارِ بہار راہ میں ہے

سفر بخیر کہ دشمن ہزار راہ میں ہے

گزر بھی جا غمِ جان و غمِ جہاں سے کہ یہ

وہ منزلیں ہیں کہ جن کا شمار راہ میں ہے

تمیزِ رہبر و رہزن ابھی نہیں ممکن

ذراٹھہر کہ بلا کا غبار راہ میں ہے

گروہِ کجکلہاں کو کوئی خبر تو کرے

ابھی ہجوم سرِ رہگزرا راہ میں ہے

نہ جانے کب کا پہنچ بھی چکا سرِ منزل

وہ شخص جس کا ہمیں انتظار راہ میں ہے

فرازؔ اگرچہ کڑی ہے زمین آتش کی

ہزار ہا شجرِ سایہ دار راہ میں ہے

شاعر: احمد فراز

Suna To Hay Keh Nigaar   e  Bahaar Raah Men Hay

Safar Bakhair Keh Dushman hazaar Raah Men Hay

Guzar Bhi Ja Gham  e  Jaan  o  Gham  e  Jahaan Say Keh Yeh

Wo Manzlen Hen Keh Jin Ka Shumaar Raah Men Hay

Tazmeez   e  Rehbar  o  Rehzan Abhi Nahen Mumkin

Zara Thehr Keh Balaa Ka Ghubaar Raah Men Hay

Garoh  e  Kajkalhaan Ko Koi Khabar To Karay

Abhi Hujoom Sar  e  Rehguzaar Raah Men Hay

Na jaanay Kab Ka Pahunch Bhi  Chuka Sar  e   Manzil

Wo Shakhs Jiss Ka HAmen Intezaar Raah Men Hay 

FARAZ Agarcheh Karri Hay Zameen AATISH Ki

Hazaarha Shajr  e  Saayadaar Raah Men Hay

Poet:Ahmaad Faraz 

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -