ہر دوا درد کو بڑھا ہی دے

ہر دوا درد کو بڑھا ہی دے
ہر دوا درد کو بڑھا ہی دے

  

ہر دوا درد کو بڑھا ہی دے

اب تو اے دل اُسے بُھلا ہی دے

لٹُنے والے سے یُوں گریز نہ کر

کیا خبر، وہ تُجھے دُعا ہی دے

جس کے چہرے پہ میری آنکھیں ہیں

وہ مجھے طعنِ کم نگاہی دے

یہ بھی اِک شیوہِ رفاقت ہے

جانے والوں کو راستہ ہی دے

جانکنی کے عذاب سے نکلوں

آخری تیر بھی چلا ہی دے

اب تو جیسے فراز بادِ مراد

زندگی کا دِیا بُجھا ہی دے

شاعر: احمد فراز

Har Dawa Dard Ko Barrha Hi Day

Ab To Ay Dil Usay Bhula Hi Day

Lutnay Waalay Say Yun Guraiz na Kar

Kya Khabar Wo Tujhay Dua Hi Day

Jiss K Chehray Pe Meri Aankhen Hen

Wo Mujhay Taan  e   Kam Nigaahi Day

Yeh Bhi Ik Shewaa  e  Rafaaqat Hay

Jaanau Waalon Ko Raasta Hi Day

JaanKuni K Azaab Say Niklun

Aakhri Teer BHi Chalaa Hi Day

Ab To Jaisay FARAZ  Baad   e  Muraad

Zindgi Ka Dyaa Bujha Hi Day

Poet : Ahmad Faraz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -