جہانگیر ترین بڑی مشکل میں پھنس گئے، ان کے خلاف تحقیقات شروع ہو گئیں

جہانگیر ترین بڑی مشکل میں پھنس گئے، ان کے خلاف تحقیقات شروع ہو گئیں
جہانگیر ترین بڑی مشکل میں پھنس گئے، ان کے خلاف تحقیقات شروع ہو گئیں

  

اسلام آباد(ویب ڈیسک)مقامی اخبار ’’ جنگ نیوز‘‘ میں سینئر صحافی ’’ انصار عباسی‘‘ کی رپورٹ شائع ہوئی ہے جس میں دعویٰ کیا گیاہے کہ ایف آئی اے اور سیکورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن آف پاکستان (ایس ای سی پی) کی مشترکہ ٹیم بڑی ہی سرگرمی کے ساتھ ارب پتی جہانگیر ترین کے معلوم اور نامعلوم اثاثوں کی تحقیقات میں مصروف ہے اور اس عمل کے دوران انہوں نے ایسے تمام سرکاری و نجی اداروں سے رابطہ کیا ہے جن کے پاس جہانگیر خان ترین (جے کے ٹی) کی دولت اور کاروبار کا ریکارڈ موجود ہے۔

جے کے ٹی کیخلاف منی لانڈرنگ اور کارپوریٹ فراڈ کے الزامات کے تحت تقریباً 19 حکام اور نجی اداروں کو باضابطہ طور پر نوٹس جاری کیے گئے ہیں۔ نوٹس جاری کرتے وقت شوگر کمیشن 2020ءکی انکوائری رپورٹ کو مدنظر رکھا گیا ہے جو معلومات طلب کی گئی ہیں ان میں تقریباً جے کے ٹی اور ان کے ارد گرد موجود لوگوں کی ممکنہ طور پر ہر ملکیت شامل ہے۔

ایسے افراد میں ان کے اہل خانہ اور اہم ملازمین شامل ہیں۔ ان میں سے زیادہ تر نوٹسز میں جے کے ٹی سے وابستہ 22 افراد اور کمپنیوں کا ذکر شامل ہے۔ ایف آئی اے / ایس ای سی پی نے تمام بینک اکاونٹس، شیئرز، جائیدادوں، کمپنیوں اور ان کا تمام ریکارڈ، آمدنی اور ویلتھ ٹیکس کے ریٹرنز، آوٹ ورڈ ریمیٹنس، فکسڈ ڈپازٹ، کریڈٹ کارڈز، رننگ فنانس، لاکرز کی تفصیلات وغیرہ شامل ہیں۔

جن 22 افراد اور کمپنیوں کا ذکر کیا گیا ہے ان میں جہانگیر ترین، علی خان ترین، مسز آمنہ ترین، مریم ترین سیٹھی، مہر ترین، سحر خان ترین، پرنسلی جیٹس، یونیورسل برادرز، عین ٹریڈرز، الکریم انٹرنیشنل ٹریولز، محمد ردیق، مقصود احمد مالہی، ولید فاروقی، رانا نسیم، سید احمد محمود، سید مصطفیٰ محمود، حسن منیب، السراج ویلفیئر، رانا عذیر نعیم، بلال جبار، سجاد احمد فخری اور عامر وارث شامل ہیں۔

اس کے علاوہ، چیئرمین کیپیٹل ڈویلپمنٹ اتھارٹی، ڈائریکٹر جنرل ایل ڈی اے، ڈپٹی کمشنر اسلام آباد، ڈپٹی کمشنر ملتان، ڈپٹی کمشنر رحیم یار خان، ڈپٹی کمشنر لاہور، منتظم بحریہ ٹاؤن کراچی اور منتظم بحریہ ٹاؤن لاہور سے کہا گیا ہے کہ وہ اپنے دائرہ اختیار میں آنے والی حد، نجی یا کو آپریٹیو ہاؤسنگ سوسائٹیز میں ان 22 افراد اور کمپنیوں کے نام پر موجود ملکیت کی تفصیلات پیش کریں۔

17 اگست کو انہیں بھیجے گئے خط میں ان سے کہا گیا ہے کہ اینٹی منی لانڈرنگ ایکٹ کے سیکشن 25 کے تحت مذکورہ بالا افراد یا کمپنیوں کی ملکیت میں آنے والی غیر منقولہ جائیدادوں کی تفصیلات پیش کریں۔

چیف کمشنر (آئی آر)، لارج ٹیکس پیئر یونٹ لاہور سے بھی کہا گیا ہے کہ ان 22 افراد یا کمپنیوں کے سالانہ انکم ٹیکس ریٹرنز اور ویلتھ ٹیکس کے گوشواروں کی تفصیلات پیش کریں۔ سٹیٹ بینک سے بھی رابطہ کیا گیا ہے کہ ان افراد یا کمپنیوں سے جڑی ”آوٹ ورڈ فارن ریمیٹنس“ کی تفصیلات پیش کی جائیں جو انہوں نے پاکستان میں قائم کسی کمرشل بینک یا ایس بی پی میں رجسٹرڈ کسی ایکسچینج کمپنی کے ذریعے کر رکھی ہوں۔

سٹیٹ بینک کے ڈائریکٹر جنرل فنانشل مانیٹرنگ یونٹ (ایف ایم یو) سے کہا گیا ہے کہ وہ مشکوک لین دین کے حوالے سے تمام ممکنہ ایس ٹی آرز کی تفصیلات پیش کریں جو 2010ءسے لیکر اب تک کی ہوں اور جن کا تعلق جے ڈبلیو ڈی شوگر ملز، اے ٹی ایف مینگو فارمز، فاروقی پلپ ملز، جے کے فارمنگ سسٹمز لمیٹڈ، جہانگیر خان، علی خان ترین، محمد رفیق، مہر ترین، سحر ترین، رانا نسیم، مقصود احمد مالہی، سید احمد محمود، سید مصطفیٰ محمود، عامر وارث، پرنسلی جیٹس، اے کے ٹی شوگر ملز، جے کے ڈیریز، ولید فاروقی، الائنس شوگر ملز پرائیوٹ لمیٹڈ، آر وائی کے ملز لمیٹڈ، ایکس کیپیٹل لمیٹڈ، کیسکیڈ ٹیک پرائیوٹ لمیٹڈ، اسد حسین، صفا اسد، مونس الٰہی، زہرہ علی الٰہی، منیر حسین، واجد احمد خان بھٹی، تہمینہ صادق جاوید، مخدوم عمر شہریار یا کسی ایسی کمپنی یا شخص سے ہو جس کا ذکر بالائی سطور میں کیا گیا ہے۔

مختلف بینکوں کے 29 سربراہان کو بھی نوٹس جاری کیے گئے ہیں جن میں ان افراد کے تمام بینک اکاونٹس بشمول غیر ملکی کرنسی اکاو¿نٹس، فکسڈ ڈپازٹس، کریڈٹ کارڈز، رننگ فنانسز وغیرہ کی تفصیلات طلب کی گئی ہیں۔

مزید :

علاقائی -اسلام آباد -گلگت بلتستان -