آنکھوں میں سِتارے تو کئی شام سے اُترے

آنکھوں میں سِتارے تو کئی شام سے اُترے
آنکھوں میں سِتارے تو کئی شام سے اُترے

  

آنکھوں میں سِتارے تو کئی شام سے اُترے

پر دِل کی اُداسی نہ در و بام سے اُترے

کُچھ رنگ تو اُبھرے تِری گُل پیرہنی کا

کُچھ زنگ تو آئینہء ایام سے اُترے

ھوتے رہے دِل لمحہ بہ لمحہ تہہ و بالا

وہ زینہ بہ زینہ بڑے آرام سے اُترے

جب تک تِرے قدموں میں فروکش ہیں سبُو کش

ساقی خطِ بادہ نہ لبِ جام سے اُترے

بے طمع نوازش بھی نہیں سنگ دِلوں کی

شائد وہ مِرے گھر بھی کسی کام سے اُترے

اوروں کے قصیدے فقط آورد تھے جاناں

جو تُجھ پہ کہے شعر وہ الہام سے اُترے

اے جانِ فراز اے مِرے ہر دُکھ کے مسیحا

ہر زہر زمانے کا تیرے نام سے اُترے​

شاعر:  احمد فراز

Aankhon Men Sitaaray To Kai Shaam Say Utray

Par Dil Ki Udaasi Na Dar  o  baam Say Utray

Kuch Rang To Ubhray Tiri Gul Pairhani ka

Kuch Zang To Aaina  e  Ayyaam Say Utray

Hotay Rahay Dil Lamha ba Lamha Teh  o  Baala

Wo Zeena Ba Zeena barray Araam Say Utray

Jab Tak Tiray Qadmon Men Farokash Hen Saboo Kash

Saaqi Khat  e  Baada Na Lab  e  Jaam Say Utray

Bay Tamaa Nawaazish Bhi Nahen Sangdilon Ki

Shaayad Wo Miray Ghar Bhi Kisi Ka am Say Utray

Aorron K Qaseeday Faqat Awurd Thay jaana

Jo Tujh Pe Kahay Sher  o Ilhaam Say Utray

Ay Jaan  e  FARAZ Ay Miray har Dukh K Maseeha

har Zehr Zamaanay Tiray Naam Say Utray

Poet: Ahmad Faraz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -