ہر کوئی دل کی ہتھیلی پہ ہے صحرا رکھے

ہر کوئی دل کی ہتھیلی پہ ہے صحرا رکھے
ہر کوئی دل کی ہتھیلی پہ ہے صحرا رکھے

  

ہر کوئی دل کی ہتھیلی پہ ہے صحرا رکھے

کس کو سیراب کرے وہ کسے پیاسا رکھے

عمر بھر کون نبھاتا ہے تعلق اتنا

اےمری جان کے دشمن تجھے اللہ  رکھے

ہم کو اچھا نہیں لگتا کوئی ہم نام ترا

کوئی تجھ سا ہو تو  پھر نام بھی تجھ سا رکھے

دل بھی پاگل ہے کہ اس شخص سے وابستہ ہے

جو کسی اور کا ہونے دے نہ اپنا رکھے

ہنس نہ اتنا بھی فقیروں کے اکیلے پن پر

جا، خدا میری طرح تجھ کو بھی تنہا رکھے

یہ قناعت ہے اطاعت ہے کہ چاہت ہے فراز

ہم تو راضی ہیں وہ جس حال میں جیسا رکھے

شاعر: احمد فراز

                                   Har Koi Dil Ki Hatheli Pe Hay Sehra Rakhay

                      Kiss Ko Seraab Karay Wo Kisay Pyaasa Rakhay

                                                 Umr Bhar Kon Nibhaata Hay Taalluq Itna

                            Ay Miri Jaan K Dushman Tujhay Allah Rakhay

                           Ham Ko Acha nahen Lagta Koi Ham Naam Tira

              Koi Tujkh Sa Ho To Phir Naam Bhi Tujh Sa Rakhay

 Dil Bhi Paagal Hay Keh Uss Shakhs Say Hay Waabasta

                                           Jo Kisi Aor Ka Honay Day Na Apna  Rakhay

                                     Hans Na Itna Bhi Faqeeron K Akailay pan  Par

                     Jaa, Khuda Meri Trah Tujh Kop Bhi Allah Rakhay

    Yeh Qanaat hay Ataat Hay Keh Muhabbat hay FARAZ

                  Ham To Raazi HenWo Jiss Haal MEn Jaisa Rakhay

                                                                                                                                   Poet: Ahmad Faraz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -