تجھ پر بھی نہ ہو گمان میرا

تجھ پر بھی نہ ہو گمان میرا
تجھ پر بھی نہ ہو گمان میرا

  

تجھ پر بھی نہ ہو گمان میرا

اتنا بھی کہا نہ مان میرا

میں دُکھتے ہوئے دِلوں کا عیسیٰ

اور جسم لہو لہان میرا

کچھ روشنی شہر کو ملی تو

جلتا ہے جلے مکاں میرا

یہ ذات یہ کائنات کیا ہے

تو جان مری جہان میرا

تو آیا تو کب پلٹ کے آیا

جب ٹوٹ چکا تھا مان میرا

جو کچھ بھی ہوا یہی بہت ہے

تجھ کو بھی رہا ہے دھیان میرا

شاعر: احمد فراز

             Tujh Par Bhi Na Ho Jahaan Mera

                       Itna Bhi KAha Na Maan Mera

 Main Dukhtay Huay Dilon Ka   Eesa

           Aor Jism Hay lahooLuhaan Mera

                    Kuch Roshni Shehr Ko Mili To

                          Jalta Hay Jalay Makaan Mera

                     Yeh Zaat Yeh Kainaat Kya Hay

                                    Tu Jaam Miri, Jahaan Mera

                           Tu Aaya To Kab Palat K Aaya

                 Jab Toot Chuka Tha Maan Mera

              Jo Kuch Bhi Hua yahi Bahut Hay

Tujh Ko Bhi Raha Hay Dayaan Mera

                                                                Poet: Ahmad Faraz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -