اس سے پہلے کہ بے وفا ہو جائیں

اس سے پہلے کہ بے وفا ہو جائیں
اس سے پہلے کہ بے وفا ہو جائیں

  

اس سے پہلے کہ بے وفا ہو جائیں

کیوں نہ اے دوست ہم جدا ہو جائیں

تو بھی ہیرے سے بن گیا پتھر

ہم بھی کل جانے کیا سے کیا ہو جائیں

تو کہ یکتا تھا بے شمار ہوا

ہم بھی ٹوٹیں تو جا بجا ہو جائیں

ہم بھی مجبوریوں کا عذر کریں

پھر کہیں اور مبتلا ہو جائیں

ہم اگر منزلیں نہ بن پائے

منزلوں تک کا راستہ ہو جائیں

دیر سے سوچ میں ہیں پروانے

راکھ ہو جائیں، یا ہوا ہو جائیں

عشق بھی کھیل ہے نصیبوں کا

خاک ہو جائیں، کیمیا ہو جائیں

اب کے گر تو ملے تو ہم تجھ سے

ایسے لپٹیں تری قبا ہو جائیں

بندگی ہم نے چھوڑ دی ہے فراز

کیا کریں لوگ جب خدا ہو جائیں

شاعر: احمد فراز

Iss Say Pehlay Keh Ham Bewafaa Ho Jaaen

                         Kiun Na Ay Dost Ham Juda Ho Jaaen

                                  Tu Keh Yakta Tha Beshumaar Hua

                     Ham Bhi Tooten To Ja BajaaHo Jaaen

                           Ham Bhi Majbooriun Ka Ozr Karen

                            Phir Kahen Aor Mubtalaa Ho Jaaen

                                Ham Agar Manzlen Na Ban  Paaen

                                    Manzlon Tak ka Raasta Ho Jaaen

          Dair Say Sochnay Men Hen Parwaanay

                        Raakh Ho Jaaen Ya hawaa Ho Jaaen

                              Eshq Bhi Khail Hay Naseebon Ka

                            Khaak Hi Jaaen Kemyaa Ho Jaaen

                   Ab K Gar Tu Milay To Ham Tujh Say

                            Aisay Liptten Tiri Qabaa Ho Jaaen

   bandagi Ham Nay Chorr Di Hay FARAZ

                       Kia Karen Log Jab Khuda Ho Jaaen

                                                                                Poet: Ahmad Faraz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -