چلی ہے شہر میں کیسی ہوا اُداسی کی

چلی ہے شہر میں کیسی ہوا اُداسی کی
چلی ہے شہر میں کیسی ہوا اُداسی کی

  

چلی ہے شہر میں کیسی ہوا اُداسی کی

سبھی نے اوڑھ رکھی ہے رِدا اُداسی کی

لباسِ غم میں تو وہ اور بن گیا قاتل

سجی ہے کیسی، کسی پر قبا اُداسی کی

غزل کہوں تو خیالوں کی دھند میں مجھ سے

کرے کلام کوئی اپسرا اُداسی کی

خیالِ یار کا بادل اگر کھلا بھی کبھی

تو دھوپ پھیل گئی جا بجا اُداسی کی

بہت دنوں سے تیری یاد کیوں نہیں آئی

وہ میری دوست میری ہمنوااُداسی کی

فراز نے تجھے دیکھا تو کس قدر خوش تھا

پھر اُس کے بعد چلی وہ ہوااُداسی کی

شاعر:     احمد فراز

                                     Chali Hay Shehr Men Kaisi Hawaa Udaasi Ki

                                            Sabhi Nay Orrh Rakhi Hay Ridaa Udaasi Ki

                                              Libaas  e  Gham Men Tu Aor Ban Gia Qaatil

                                                           Saji Hay Kaisi Kisi Par Qabaa Udaasi Ki

Ghazal Kahen To Khayaalon Ki Dhunnd Men Mujh Say

                                                                      Karay Kalaam Koi Apsraa Udaasi Ki

                      Kahyaal  e  Yaar Ka Baadal Agar Khula Bhi Kabhi

                                                                  To Dhoop Phail Gai Jabajaa Udaasi Ki

                                            Bahut Dino Say Tiri Yaad Kiun nahen Aaee

                                               Wo Mieri Dost Meri Hamnawaa Udaasi Ki

  FARAZ Nay Tujhay Dekha To Kiss Qadar Khush Tha

                                       Phir Uss K Baad Chali Wo Hawaa Udaasi Ki

                                                                                                                                 Poet: Ahmad Faraz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -