شہرِ محبت ، ہجر کا موسم ، عہدِ وفا اور میں

شہرِ محبت ، ہجر کا موسم ، عہدِ وفا اور میں
شہرِ محبت ، ہجر کا موسم ، عہدِ وفا اور میں

  

شہرِ محبت ، ہجر کا موسم ، عہدِ وفا اور میں

تو تو اس بستی سے خوش خوش چلا گیا، اور میں؟

تو جو نہ ہو تو جیسے سب کو چپ لگ جاتی ہے

آپس میں کیا باتیں کرتے رات ، دیا اور میں

سیرِ چمن عادت تھی پہلے اب مجبوری ہے

تیری تلاش میں چل پڑتے ہیں باد صبا اورمیں

جس کو دیکھو تیری ہو امیں پاگل پھرتا ہے

ورنہ ہم مشرب تو نہیں تھے خلقِ خدا اور میں

ایک تو وہ ہمراز مرا ہے، پھر تیرا مداح

بس تیرا ذکر کیا کرتے ہیں ضیاء اور میں

ایک زمانے بعد فراز ؔیہ شعر کہے میں نے

اک مدت سے ملے نہیں ہیں یار مرا اور میں

شاعر: احمد فراز

              Shehr  e   Muhabbat, Hijr Ka Mosam, Ehd  e   Wafa Aor  Main

                             Tu To Iss Basti Say Khush Khush Chalaa Gia , Aor  Main

                                           Tu Jo Na Ho To Jaisay Sab Ko Chup Lagg Jaaati Hay

                                               Aapas Men KIa Baaten Kartay Raat, Dia, Aor Main

                                            Sair  e  Chaman Aadat Thai Pehlay Ab Majboori Hay

                   Teri Talaash Men Chall Parrtay Hen Baad  e  Saba  Aor Main

                                                      Jiss Ko Dekho Teri Haww Men Paagal Phirta Hay

Warna Ham Mashrib To Nahen Thay. Khalq  e  Khuda  Aor Main

                                                  Aik To Wo Hamraaz Mira Hay , Phir Tera Maddaah

                                                         Bass Tera Hi Zikr Kia Kartay Hen ZI A  Aor  Main

                              Aik Zamaanay Baad FARAZ Yeh Sher Kahay Main Nay

                                        Ik Muddat Say Milay Nahen Hen Yaar Mira Aor Main

                                                                                                                                                                       Poet: Ahmad Faraz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -