وہ جو آجاتے تھے آنکھوں میں ستارے لے کر

وہ جو آجاتے تھے آنکھوں میں ستارے لے کر
وہ جو آجاتے تھے آنکھوں میں ستارے لے کر

  

وہ جو آجاتے تھے آنکھوں میں ستارے لے کر

جانے کس دیس گئے خواب ہمارے لے کر

چھاؤں میں بیٹھنے والے ہی تو سب سے پہلے

پیڑ گِرتا ہے تو آجاتے ہیں آرے لے کر

وہ جو آسودہِ ساحل ہیں انہیں کیا معلوم

اب کے موج آئی تو پلٹے گی کنارے لے کر

ایسا لگتا ہے کہ ہر موسمِ ہجراں میں بہار

ہونٹ رکھ دیتی ہے شاخوں پہ تمھارے لے کر

شہر والوں کو کہاں یاد ہے وہ خواب فروش

پھرتا رہتا تھا جو گلیوں میں غبارے لے کر

نقدِ جاں صرف ہوا کلفتِ ہستی میں‌فرازؔ

اب جو زندہ ہیں تو کچھ سانس ادھارے لے کر

شاعر:  احمد فراز

Wo Jo Aatay jaatay Thay Aankhon Men Sitaaray Lay Kar

                           Jaanay Kiss Dais Gaey Khaab Hamaaray Lay Kar

            Chaaon Men Baithanay Waalay Hi To Sab Say Pehlay

                                Pairr Girta Hay To Aa Jaatay Hen Aaray Lay Kar

                                Wo Jo Asooda  e  Saahil Hen Unhen Kia Maloom

                                      Ab K Moj Aaee To   Paltay Gi Kinaaray Lay Kar

 Aisa Lagta Hay  Keh Har Mosam  e   Hijraan Men Bahaar

Hontt Rakh Deti Hay Shaakhon Pe Tumahaar ay Lay Kar

                Shehr Walon Ko Kahan Yaad Hay Wo Khaab Farosh

              Phirta Rehta Tha Jo Galiun Men Ghubaaray Lay Kar

                       Naqd  e  Jaan Sarf Hua Kalift  e  Hasti Men FARAZ

                  Ab Jo Zinda Hen To Kuch Saans Udhaaray Lay Kar

Poet: Ahmad Faraz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -