وحشتیں بڑھتی گئیں ہجر کے آزار کے ساتھ

وحشتیں بڑھتی گئیں ہجر کے آزار کے ساتھ
وحشتیں بڑھتی گئیں ہجر کے آزار کے ساتھ

  

وحشتیں بڑھتی گئیں ہجر کے آزار کے ساتھ

اب تو ہم بات بھی کرتے نہیں غم خوار کے ساتھ

ہم نے اک عمر بسر کی ہے غمِ یار کے ساتھ

میر دو دن نہ جئے ہجر کے آزار کے ساتھ

اب تو ہم گھر سے نکلتے ہیں تو رکھ دیتے ہیں

طاق پر عزتِ سادات بھی دستار کے ساتھ

اس قدر خوف ہے اب شہر کی گلیوں میں کہ لوگ

چاپ سُنتے ہیں تو لگ جاتے ہیں دیوار کے ساتھ

ایک تو خواب لیے پھرتے ہو گلیوں گلیوں

اس پہ تکرار بھی کرتے ہو خریدار کے ساتھ

شہر کا شہر ہی ناصح ہو تو کیا کیجیے گا

ورنہ ہم رند تو بھڑ جاتے ہیں دو چار کے ساتھ

ہم کو اس شہر میں تعمیر کا سودا ہے جہاں

لوگ معمار کو چن دیتے ہیں دیوار کے ساتھ

جو شرف ہم کو ملا کوچۂ جاناں سے فراز

سوئے مقتل بھی گئے ہیں اسی پندار کے ساتھ

شاعر: احمد فراز

Weshten barrti gaen Hijr K Azaar K Saath

Ab To Ham Baat Bhi kartay Nahen Gham Khaar K Saath

Ham Nay Ik Umr Basar Ki Hay Gham  e  Yaar Ka Saath

Meer Do Din Na Jiay Hijr K Aazaar K Saath

Ab To Ham Ghar Say Nikaltay Hen To Rakh Detay Hen

Taq Par Izzat   e  Sadaat Bhi Dastaar K Saath

    Iss Qadar Khaof  Hay ab Shehr Ki Galion Men Keh Log

  Chaap Suntay Hen To Lagg Jaatay Hen Dewaar K Saath

                                          Aik To Khaab Liay Phirtay Ho Galion Galion

                           Uss Pe Takraar Bhi Kartay Ho Kahridaar K  Saath

                                                 Shehr Ka  Shehr Hi Naaseh Ho To Kia Kijiay

Warna Ham Rindh To Bhirr Jaatay Hen Do Chaar K Saath

Ham ko Iss Shehr Men Tameer Ka Saoda  hay Jahaan

                        Log Mamaar Ko Chun Detay Hen Dewaar K Saath

              Jo Sharaf Ham Ko Mila  Koocha   e  jaana Say FARAZ

                               Soo  e  Maqtal Bhi Gaey Hen Usi Pindaar K Saath

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -