ڈالر مہنگا ، پاکستان میں اشیائے خوردونوش کی قیمتیں بڑھ گئیں

ڈالر مہنگا ، پاکستان میں اشیائے خوردونوش کی قیمتیں بڑھ گئیں

  

کراچی( آن لائن ) پاکستان میں ڈالر کی قیمت میں حالیہ اضافے کے بعد ملک بھر میں اشیاء خورونوش کی قیمتوں میں بھی اضافہ ہوگیا۔ کراچی میں جوڑیا بازار کے ہول سیل تاجروں کا کہنا ہے ڈالر کی قیمتوں میں اضافے کے بعد برآمد شدہ کھانے کی اشیاء پر زیادہ تیزی سے اضافہ ہوا اور چائے، کافی، دودھ پاؤڈر، چوکلیٹ اور چیز سے لیکر دالوں، مصالحوں اور اچاروں تک بڑی تعداد میں درآمدشدہ اشیاء 5 سے 10 فیصد مہنگی ہوئی۔مارکیٹ سروے پر مبنی ذرائع ابلاغ کی رپورٹس کے مطابق دسمبر کے دوسرے ہفتے میں ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر میں تقریباً 5 فیصد کمی کے باعث رٹیل مارکیٹوں میں مقامی طور پر پیدا ہونے والی اشیاء کی قیمتوں میں بھی اضافہ دیکھا گیا۔ادارہ شماریات پاکستان کے مطابق روپے کی قدر میں کمی کے دوران 53 ضروری اشیاء کی قیمتوں میں اوسطاً ہفتے کے دوران 0.2 فیصد اضافہ ریکارڈ کیا گیا۔ ایک معروف کوکنگ آئل اور گھی مل کے اہم مالیاتی افسر کا کہنا تھا کہ کھانے کے مقامی تیل کی تیاری میں استعمال ہونے والے خام تیل اور سویا بین آئل کی قیمت میں اضافے کے بعد ہمارے خام مال کی قیمتوں میں بھی 5 سے 10 فیصد اضافہ ہوا۔انہوں نے کہا کہ روپے کی قدر میں کمی کے باعث جنوری کے لیے خام تیل اور سویا بین آئل کے معاہدے پر اس سے زیادہ لاگت آئیگی۔اسی طرح کی وجوہات کا حوالہ دیتے ہوئے چائے مرکب کرنے والی کمپنی کے حکام نے جنوری میں قیمتوں میں اضافے کا اشارہ دیتے ہوئے کہا کہ امریکی مرکزی بین کی جانب سے شرح سود ہٹانے کے بعد بنگلہ دیش اور سری لنکا میں چائے کی قیمتوں میں پہلے ہی اضافہ ہو چکا ہے۔ دالوں کے ایک بڑے درآمد کندہ انیس مجید کے مطابق درآمد شدہ سامان کی ملک میں پہنچنے والے دن کی مناسبت سے ادائیگی کی جاتی ہے جبکہ روپے کی قدر میں کمی کے باعث درآمدی قیمت خودکار طور پر بڑھ جاتی ہے لیکن ہم فوری طور پر ریٹیلرز کو دینے کے لیے اس میں اضافہ نہیں کرسکتے۔ریٹیلرز کا دعویٰ ہے کہ کراچی کی نیم ہول سیل مارکیٹوں کے دکانداروں نے پہلے ہی مونگ، مسور، ماش کی دالوں کے ساتھ ساتھ سفید وسیاہ چنے اور بیسن و دیگر اشیاء کی قیمتوں میں 10 فیصد اور اس سے زائد کا اضافہ کردیا ہے۔

مزید :

کامرس -