پنجاب کانسٹیبلری ملتان سکینڈل ، ڈسٹرکٹ اکاؤنٹس آفس کے کمپیوٹر آپریٹر سے 40لاکھ روپے برآمد

پنجاب کانسٹیبلری ملتان سکینڈل ، ڈسٹرکٹ اکاؤنٹس آفس کے کمپیوٹر آپریٹر سے ...

ملتان(نمائندہ خصوصی)انٹی کرپشن اسٹبلشمنٹ ملتان کو پنجاب کانسٹیبلری ملتان میں سکینڈل میں اب تک کی بڑی کامیابی حاصل ہوئی ہے۔انکوائری ٹیم نے ریمانڈ کے دوران ڈسٹرکٹ اکاؤنٹس آفس کے کمپیوٹر آپریٹر شکیل سے 40لاکھ روپے(بقیہ نمبر52صفحہ12پر )

برآمد کرلئے ملزم نے دوران تفتیش میگا سکینڈل میں ملوث ڈسٹرکٹ اکاؤنٹس آفس ملتان نے تمام شرفاء کے کرداروں سے پردہ اٹھادیا جبکہ گھوسٹ ملازمین کے نام پر کروڑوں روپے کے فراڈ کے تکنیکی طریقے کا بھی انکشاف کردیا۔رات گئے تک مزید سنسنی خیز انکشافات سامنے آنے کے احکامات ہیں۔بتایا گیا ہے محمد شکیل ڈسٹرکٹ اکاؤنٹس آفس ملتان میں کی۔پنچ آپریٹر کے طور پر کام کرتا ہے۔مھا8د شکیل کو اپنے کام میں بھرپور مہارت حاصل تھی۔گزشتہ 8سال کے دوران محمد شکیل ڈسٹرکٹ اکاؤنٹس آفیسر کی آنکھوں کا تارا ثابت ہوا۔ملزم نے دوران تفتیش سینئر آڈیٹرز مدثر رضا دریشک،طاہر بخاری کے علاوہ ڈسٹرکٹ اکاؤنٹس افسران بشیر احمد،قمر عباس مگسی اور باسط مقبول ہاشمی کے کردار کا بھی انکشاف کیا۔تفتیش کے دوران ملزم نے غبن کی گئی رقم 40لاکھ روپے انکوائری ٹیم کے حوالے کردئیے۔معلوم ہوا ہے ملزم سے رات گئے تک مزید سنسنی خیز انکشافات سے برآمد کی گئی رقم انٹی کرپشن اسٹبلشمنٹ ملتان کی سب سے بڑی نقد ریکوری ثابت ہوئی۔حالانکہ اس سکینڈل میں محمد شکیل سب سے چھوٹا کردار ہے۔بڑے کردار تاحال مفرور ہیں۔جن کی گرفتاری کیلئے چھاپے جاری ہیں۔

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...