چارسدہ:مقتول کے لواحقین کا پولیس پر جانبداری کا الزام

چارسدہ:مقتول کے لواحقین کا پولیس پر جانبداری کا الزام

  

چارسدہ (بیورو رپورٹ)شاہ پسند کلی میں فائرنگ کے واقعہ میں مقتول اور مجروحین کے لواحقین نے الزام لگایا ہے کہ مقامی پولیس ملزمان کو گرفتار کرنے کی بجائے ہمیں ڈرادھمکا رہی ہے ۔ پولیس نے ہمارے 8افراد کے خلاف بے جا مقدمات درج کئے ہیں ۔ آئی جی خیبر پختونخوا انصاف فراہم کریں اور مقامی پولیس کے خلاف کاروائی کریں۔ تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز شاہ پسند کلی میں فائرنگ کے واقعہ میں قتل ہونے والے حاجی ممتاز کے بھائی روح الامین ، مقتول حاجی ممتاز کی بیوہ مسماۃ (ن) اور بیٹے بشیر احمد نے واقعہ میں دیگر زحمی ہونے والے افراد کے لواحقین کے ہمراہ ہنگامی پریس کانفرنس سے خطاب کر تے ہوئے کہا کہ گزشتہ روز ملزمان سیف الامین ، صفدر گل ، جان علی اور مرجان علی سیڑھی لگا کر ہمارے گھر میں داخل ہوئے اور چادر چاردیواری کا تقدس پامال کر کے خواتین کو بے عزت کیا جبکہ ان کے بھائی حاجی ممتاز کو بد ترین تشدد کا نشانہ بنانے کے بعد فائرنگ کرکے قتل کر دیا جبکہ ملزمان کی فائرنگ سے امام مسجد سمیت تین افراد سیف الرحمان ، ارشاد اور نذیر خان زخمی ہوگئے ۔ انہوں نے کہاکہ واقعہ کے بعد مقتول کی بیوہ ایف آئی آر کیلئے تھانہ نستہ گئی تو پولیس نے ایف آئی آر درج کرنے سے انکار کیا اور کہا کہ قانون کے مطابق کسی خاتون کی ایف آئی آر درج نہیں کی جا سکتی ۔ انہوں نے مزید کہا کہ پولیس بااثر ملزمان کے ساتھ ملی ہوئی ہے اور ان پر ہاتھ ڈالنے کی بجائے الٹا ہمیں ڈرا دھمکا رہی ہے ۔ انہوں نے اس امر پر تشویش کا اظہار کیا کہ پولیس نے ہمارے 8افراد پر بے بنیاد مقدمات درج کئے ہیں ۔ انہوں نے وزیر اعلی پرو یز خٹک اور آئی جی خیبر پختونخوا سے داد رسی اور تھانہ نستہ پولیس کے خلاف کاروائی کا مطالبہ کیا ۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -