ورلڈ بینک اور مدینہ کی اسلامی ریاست کی منزل ایک نہیں ہو سکتی:سراج الحق

ورلڈ بینک اور مدینہ کی اسلامی ریاست کی منزل ایک نہیں ہو سکتی:سراج الحق
ورلڈ بینک اور مدینہ کی اسلامی ریاست کی منزل ایک نہیں ہو سکتی:سراج الحق

  



کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن)امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ کشمیر کے حوالے سے ہمارے حکمران فوجی جنرل گریسی اور پہلے وزیرخارجہ سر ظفر اللہ کی پالیسی پر عمل پیرا ہیں،کشمیر کے حوالے سے حکومت کا کردار مشکوک ہے، اگر حکومت مدینہ کی ریاست کے قیام کے لیے کام کرتی تو ہم اس کا ساتھ دیتے مگر ان کا رُخ تو ورلڈ بینک کی طرف ہے، ورلڈ بینک اور مدینہ کی اسلامی ریاست کی منزل ایک نہیں ہو سکتی،اس وقت پرویز مشرف کو سزا دینا یا نا دینا عام آدمی کا مسئلہ نہیں، اصل ضرورت آئین وقانون کی بالادستی ہے،عدالتوں اور تعلیمی اداروں میں انگریز ی قوانین کے بجائے قرآن کی بالادستی دیکھنا چاہتے ہیں ،ایوانوں میں امریکی ایجنٹوں کے بجائے غلامان مصطفیﷺ کو دیکھنا چاہتے ہیں،15ماہ سے اعلانات اور سبز باغ دکھائے جارہے ہیں، ایک اجلاس پر 10کروڑ تک خرچ ہوتا اور اجلاس10منٹ ہی چلتا ہے، یہ حکمران کبھی بھی ایجنڈے پر بات نہیں کرتے، وسائل کی غیر منصفانہ تقسیم ہے، غریب پریشان ہے،کل کے اورآج کےحکمرانوں میں کوئی فرق نہیں یہ سب ورلڈ بینک کے در پر سجدہ ریز ہیں،کل بھی امریکا سے ڈرنے والی قیادت تھی آج کے حکمران بھی امریکاسے خوف کھاتے ہیں۔

 جماعت اسلامی ضلع شرقی اور ضلع غربی کے تحت منعقدہ ایک روزہ ”دعوتی وتربیتی اجتماع“ سے خطاب کرتے ہوئے سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ جماعت اسلامی دوسری جماعتوں کی طرح عام پارٹی نہیں ہے ،یہ اس تحریک کا تسلسل ہے جس کی قیادت انبیا کرام کے ہاتھوں میں رہی، ہم اسی راستے پر چلنے والے لوگ ہیں، انبیاءکرام علیہ السلام اور حضور نبی اکرمﷺ کےبعداللہ کےنیک بندوں نےاللہ کی کبریائی کا علم اٹھایا ،جماعت اسلامی بھی اللہ کی کبریائی کا پرچم بلند کر رہی ہے ،ہم جذباتی نہیں نظریاتی لوگ ہیں اورایک عقیدے کی بنیادپرجمع ہوئے ہیں ، ہم مخلوق خدا کو اپنی ذات کی طرف نہیں اللہ او ر اس کے رسولﷺ کی طرف بلاتے ہیں، اگر ہم انقلاب کا نعرہ لگاتے ہیں تو درحقیقت ہم طاغوتی قوتوں اور تمام باطل نظاموں کی نفی کرتے ہیں، اللہ نے جو نظام دیا ہے اس کے ساتھ کوئی سیکولرازم اور لبرل ازم نہیں چلے گا۔ 

سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ ہمیں موجودہ مہنگائی کی آگ کے ساتھ ساتھ آخرت کی آگ سے خود کو اور دوسروں کو بھی بچانے کی فکر کرنی ہے،ہمیں لوگ ڈرا رہے ہیں کہ نظام کے ساتھ چلنا چاہیے ، مگر ہم کبھی مصالحت کا شکار نہیں ہوں گے،خیر اور شر کی اس جنگ میں ہمیں اپنے حصے کا کام کرنا ہے،اس جنگ میں جو غیر جانبداررہنا چاہتا ہے وہ دراصل منافقت کرتا ہے،آج دجالی نظام مسلط ہے،اسلامی دنیا اوراس کےوسائل پردشمنوں کاقبضہ ہے،ہمارے چھوٹے بڑے فیصلے ہی نہیں حتی کہ اشیائے ضرورت کی قیمتیں بھی دشمن ممالک کی ہدایت پرطےہوتی ہیں،ہم بظاہرآزاد لیکن معاشی طور پر غلام ہیں ، ہمارا نظام تعلیم ، سیاست ، قیادت سب غلام بن کر رہ گئے ہیں ہمار اکا م صرف’یس سر ‘کہنا رہ گیا ہے، پاکستان 22کروڑ مسلمانوں کا ایک سمندر ہے ، ہمارے پاس بہترین جغرافیائی لوکیشن ہے ،1947میں جغرافیائی طور پر ہم آزاد ہوئے مگر آج بھی غلامانہ فیصلے ہیں اسی وجہ سے نہ نظام معیشت بہتر ہے اور نہ ہم معاشرے کو ایک قوم بنانے میں کامیاب ہوسکے ، آج پاکستان کو کشمیر کا مسئلہ درپیش ہے ،5اگست سے آج تک کشمیر کا محاصرہ ہے لیکن حکومت کے پاس کوئی کشمیر پالیسی نہیں ہے ، ہم نے 22دسمبر کو ڈی چوک پر ”کشمیر مارچ “منعقد کیا جس سے بھارت اتنا خوف زدہ نہیں ہوا جتنا ہمارے حکمران خوف زدہ ہوگئے ، ہمارے کارکنوں کو گرفتار اور حراساں کیا گیا ،یہ سب کس کو خوش کرنے کے لیے کیا گیا؟حکمرانوں نے امریکہ اور بھارت کو پیغام دیا کہ ہم کشمیریوں کی حمایت کرنے والوں کے ساتھ نہیں ہیں ۔

انہوں نے کہاکہ کشمیر کے مسئلے پر حکمران سوسکتے ہیں ہم نہیں ، ہم یہ مسئلہ ہر فورم پر اٹھارہے ہیں ، حکمران ٹس سے مس نہیں ہورہے، کشمیر کے حوالے سے حکومت نے اپنے عمل سے بتایا ہے کہ کشمیر کو بھارت کے قبضے کو تسلیم کر تے ہیں،اللہ اور اس کے رسول سے جنگ کرنے والے معیشت کو بہتر نہیں کرسکتے ، ملک پر سود خوروں کا ٹولہ مسلط ہے ، بلدیاتی انتخابات ہونے والے ہیں ، انتخاب ایک بڑے انقلاب کا ذریعہ ہے ، لوگوں کے دل اللہ کے ہاتھوں میں ہے ، ہمیں اس کے لیے بھرپور حکمت عملی اور تیاری کرنے کی ضرورت ہے ، کارکنان ابھی سے ووٹر لسٹوں میں اندراج کا کام کریں، کراچی کے حالات پہلے سے بہت زیادہ بہتر ہوگئے ہیں ،تمام کارکنان اپنے اپنے حلقہ جات میں ایک ذمہ داری کے ساتھ آنے والے بلدیاتی انتخابات کے لیے بھرپور تیاری کریں ۔

مزید : قومی