سوئی گیس غائب، گھرگھر ”سیاپا“ایل پی جی، لکڑیاں مزید مہنگی، صورتحال سنگین

سوئی گیس غائب، گھرگھر ”سیاپا“ایل پی جی، لکڑیاں مزید مہنگی، صورتحال سنگین

  



کوٹ ادو، حاصل پور، اوچشریف، کبیروالا، عبد الحکیم، ڈیرہ (تحصیل رپورٹر، نامہ نگار، نمائندہ پاکستان، سٹی رپورٹر، نمائندہ خصوصی)ملک بھر کی طرح گزشتہ کئی روز سے کوٹ ادو اور علاقائی علاقوں میں سردی کی شدت میں اضافہ ہوتا جارہا ہے، علاقائی علاقوں میں صبح سویرے دھند بھی ہوتی ہے جس سے آئے روز حادثات ہو رہے ہیں، سردی کی شدت میں اضافہ کے ساتھ ساتھ دوکانداروں نے انڈے(بقیہ نمبر5صفحہ12پر)

،مچھلی، خشک میوہ جات،کوئلہ کی قیمتوں میں اضافہ کر دیا ہے، اس وقت شہر میں دیسی انڈہ 240روپے درجن جبکہ فارمی انڈہ160 روپے فروخت کیا جا رہا ہے جبکہ کوئلہ 80روپے کلو،مچھلی 4سوروپے سے لیکر12سوروپے فی کلوروپے کلو تک فروخت ہو رہی ہے خشک میوہ جات کی قیمتیں بھی آسمان کو چھونے لگیں،انڈہ،خشک میوہ جات اور مچھلی کی قیمتیں بڑھنے سے غریب آدمی کی خرید مشکل ہو گئی ہیں،غریب آدمی صرف دیکھنے تک محدود رہ گیا ہے، اس طرح لنڈا بازاروں میں عورتوں اور مردوں کا رش بڑھ گیا ہے جس پر لنڈا بازار کے دوکانداروں نے بھی ریٹ بڑھا لیئے ہسپتالوں میں بچے بوڑھے اور نوجوانوں کا رش بڑھ گیا ہے جس میں زیادہ تر مریض نزلہ کھانسی بخار کے آتے ہیں جس سے ہسپتالوں میں مریضوں کا رش بھی بڑھ گیا ہے۔سوئی گیس کا بحران شدت اختیار کر گیا ہے شہر کے بیشتر علاقے سوئی گیس نہ ہونے جبکہ گھریلو اور کمرشل ہوٹلوں وغیرہ سوئی گیس کے کم دباؤ اور پریشر سوئی گیس کی وجہ سے صارفین سوئی گیس سستے انیدھن سے محروم ہوئے محکمہ سوئی گیس کے آفسران نے آنکھیں بند کر لیں جبکہ ایل پی جی ڈیلروں اور تحصیل حاصل پور میں محکمہ سول ڈیفنس کی ملی بھگت سے غیرقانونی کھلے عام گیس کی ریفلنگ کرنے والوں مافیا من مانیا کرتے ہوئے شہریوں کو دونوں ہاتھوں سے لوٹنے لگا ایل پی جی ڈیلروں نے مبینہ طور پر گیس کی قیمت میں اضافہ کرتے ہوئے 160روپے فی کلو وصول کرنے لگے سوئی نادرن گیس کے آفسران کی عدم توجہی اور لاپرواہی کے باعث سوئی گیس کی فراہمی میں پریشر کی کمی صبح دوپہر اور شام کے وقت کر دی جاتی ہے اور رات 9بجے ویسے ہی بند کر دی جاتی ہے اور چھوٹی والے دن اکثر گیس بند رکھی جاتی ہے جس سے کاروباری حضرات اور گھریلو صارفین کو مشکلات و پریشانیوں کا سامنا ہے جبکہ سوئی گیس کی بندش کے باعث کوئلہ کے ذخیرہ اندوزوں اور لکڑی والوں نے بھی ریٹس میں اضافہ کر دیا ہے اور من مرضی کے ریٹ وصول کر رہے ہیں گیلی لکڑی 600روپے من اور خشک لکڑی 700روپے من وصول کیئے جانے لگے ہیں۔ اوچ شریف شہر اورگردنواح میں سخت سردی کی لہر جاری ہے سردی بڑھتے ہی سوئی گیس غائب ہو گئی ہے گیس کی بندش کی وجہ سے گھریلو صارفین کو شدید مشکلات کا سامنا ہے کھانا پکانے کے لیے خواتین کو پریشانی کا سامنا رہتا ہے صبح کے وقت گیس نہ ہونے پر ناشتہ بنانے میں دشواری کا سامنا رہتا ہے,محلہ جگ پورہ,سوڈھگان,شمیم آباد,محلہ گیلانی ودیگر علاقوں کے گھریلو صارفین سوئی گیس کی بندش اور پریشر میں کمی کی وجہ سے بلوں کی ادائیگی کے باوجود کھانا پکانے کے لیے لکڑیاں جلانے پر مجبور ہیں,رانا محمد اسلم,ملک مشتاق احمد,عبدالستار,اسد نواز,ندیم خان,منیر احمد ودیگران نے سوئی گیس کے اعلی حکام سے نوٹس لینے مطالبہ کیا ہے۔ سی این جی گیس اسٹیشن کی بند ش کے حکو متی دعوؤں کے برعکس کبیراوالا ملتان روڈ پر واقع ایک سی این جی اسٹیشن کا مالک حکام کی آنکھوں میں دھول جھو نکتے نہ صرف خود بلکہ دوستوں کی گاڑیوں میں چوری گیس بھرنا شروع کررکھی ہے جب کہ کبیروالا کے شہر یوں کو سو ئی گیس کی بدترین لوڈ شیڈنگ کاسامنا کرنا پڑرہا ہے، شہری،سماجی حلقوں نے سی این جی کی چوری چھپے بیچنے پر شدید احتجاج کرتے ہو ئے حکام بالا سے مذکورہ اسٹیشن مالک کے خلاف کاروائی کامطالبہ کیا ہے۔ اوچ شریف شہر اورگردنواح میں سخت سردی کی لہر جاری ہے سردی بڑھتے ہی سوئی گیس غائب ہو گئی ہے گیس کی بندش کی وجہ سے گھریلو صارفین کو شدید مشکلات کا سامنا ہے کھانا پکانے کے لیے خواتین کو پریشانی کا سامنا رہتا ہے صبح کے وقت گیس نہ ہونے پر ناشتہ بنانے میں دشواری کا سامنا رہتا ہے,محلہ جگ پورہ,سودھگان,شمیم آباد,محلہ گیلانی ودیگر علاقوں کے گھریلو صارفین سوئی گیس کی بندش اور پریشر میں کمی کی وجہ سے بلوں کی ادائیگی کے باوجود کھانا پکانے کے لیے لکڑیاں جلانے پر مجبور ہیں۔ سردی کی شدت بڑھنے کے ساتھ ملک بھر کی طرح عبدالحکیم و مضافاتی علاقہ جات میں بھی سوئی گیس کا پریشر بالکل کم ہوچکا ہے حتیٰ کہ کھانا بنانا بھی مشکل ہوتا جارہا تجارتی و گھریلوصارفین گیس کے سلنڈراستعمال کرنے پر مجبور ہوگئے ہیں کمرشل صارفین نے بتایا کہ دن بھر گیس کم پریشر کے سبب کاروبارزندگی ٹھپ ہوگیا ہے گھریلو صارفین نے کہا کہ سردیوں میں گیس کی ضرورریات بڑھنے کے ساتھ محکمہ سوئی گیس نے تاحال پریشر زیادہ نہ کیا ہے صارفین ذہنی اذیت کا شکار ہورہے ہیں۔ملک بھر میں خون جمادینے والی شدید سردی کی لہر آج 26 دسمبر کی شام سے پاکستان کا رخ کر رہی ہے بارش کا ملک کیکسی حصے میں اگلے 5 دن تک کوئی امکان نہیں ہے-البتہ ایک بارش کا سسٹم دسمبر کے اخر میں آئیگا- بارش کا ایک طاقتور سسٹم جنوری کی شروعات میں متاثر کر سکتا ہے،جو کہ فروری کے شروع ''فریش موسم اپ ڈیٹ، ہڈیاں جما دینے والی سردی کا سپل کل سیداخل ہورہا،سارے پاکستان میں شدید سردی کی لہر کل شام سے پاکستان کا رخ کر رہی ہے بارش کا ملک کے کسی حصے میں اگلے 5 دن تک کوئی امکان نہیں ہے- البتہ ایک بارش کا سسٹم دسمبر کے اخر میں آئیگا- بارش کا ایک طاقتور سسٹم جنوری کی شروعات میں متاثر کر سکتا ہے،جو کہ فروری کے شروع تک متواتر بارشوں کا باعث بنے گا،کل سے دھند کی شدت میں مزید اضافہ ہو گا دھند کا یہ سلسلہ کئی روز تک جاری رہیگا-ملک کے کئی حصوں میں درجہ حرارت نقطہ ان جماد سے نیچے گر جائے گا-یہ لہر 28 دسمبر تک جاری رہے گی۔دھند کی شدت میں مزید اضافہ ہو گا*دھند کا یہ سلسلہ کئی روز تک جاری رہیگا-ملک کے کئی حصوں میں درجہ حرارت نقطہ انجماد سے نیچے گر جائے گا-یہ لہر 28 دسمبر تک جاری رہے گی جس کیلئے محکمہ موسمیات نے خبردار کیاھے کہ اس میں احتیاطی تدابیر اختیار کی جائیں اور غیر ضرور ی سفر کے ساتھ ساتھ باہر نکلنے سے بھی گریز کیا جائے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...