تجارتی خسارے میں اضافہ ناکام حکومتی پالیسیوں کا ثبوت ہے،وسیم اختر

تجارتی خسارے میں اضافہ ناکام حکومتی پالیسیوں کا ثبوت ہے،وسیم اختر

 لاہور(سپیشل رپورٹر)پنجاب اسمبلی میں پارلیمانی لیڈر اور امیر جماعت اسلامی پنجاب ڈاکٹر سید وسیم اختر نے کہا ہے کہ سٹیٹ بنک کی رپورٹ کے مطابق موجودہ حکومت کے پہلے سات ماہ میں تجارتی خسارہ 20 فیصد اضافے سے 11.418ارب ڈالر ہوگیا ہے جوکہ ناکام حکومتی پالیسیوں کی عکاسی کرتا ہے17.417ارب ڈالر کی برآمدات کے مقابلے میں درآمدات کاحجم 28.898 ارب ڈالر رہاگزشتہ برس اسی مدت میںتجارتی خسارہ9.511ارب ڈالر تھا عوام کو دووقت کی روٹی کمانا مشکل ہو چکا ہے مہنگائی آسمان سے باتیں کررہی ہے حکمرانوں نے اقتدار میں آنے سے پہلے جتنے بھی دعوے کیے تھے سب کے سب ریت کی دیوار ثابت ہوئے عوام کو کسی قسم کا کوئی ریلیف میسر نہیںسرمایہ دار بیرونی ممالک کارخ کررہے ہیںتوانائی بحران خوفناک شکل اختیار کرچکا ہے اربوں ڈالر کاکالادھن باہر جارہا ہے اور کوئی پوچھنے والاہی نہیں پاکستان کی ترقی،خوشحالی اور استحکام کے لئے ضروری ہے کہ کرپشن ختم کی جائے حکمران ایسی معاشی پالیسی ترتیب دیں جوحقیقی معنوں میںعوام دوست ہوںناقص اور ہنگامی پالیسیوں نے ملکی معیشت تباہ وبرباد کرکے رکھ دی ہے اس وقت پاکستان225ارب ڈالر کی ڈی جی پی کے ساتھ دنیا کی44ویں معیشت ہے جماعت اسلامی کے رہنمانے مزید کہاکہ ملک میں ٹیکسوں کا نظام ٹھیک ہونا چاہئے غریب عوام پر ہی ٹیکسوں کا بوجھ ڈالنے سے مسائل بڑھ رہے ہیںضرورت اس امر کی ہے کہ بڑے جاگیرداروں،سرمایہ داروں اور صنعتکاروں کو ٹیکس نیٹ ورک میں لایاجائے پاکستان وسائل سے مالا مال ملک ہے لیکن محب وطن قیادت کا فقدان ہے نااہل حکمرانوں نے وطن عزیز کو آئی ایم ایف کے تابع بناکررکھ دیا ہے اور عالمی طاقتوںکی خیرات کے رحم وکرم پر چھوڑدیا ہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 4