پاکستان نے امریکہ کو فوجی آپریشن شروع کرنے سے آگاہ کردیا

پاکستان نے امریکہ کو فوجی آپریشن شروع کرنے سے آگاہ کردیا
پاکستان نے امریکہ کو فوجی آپریشن شروع کرنے سے آگاہ کردیا

  

واشنگٹن (اظہر زمان، بیورو چیف) پاکستان نے امریکہ کو سرکاری طور پر آگاہ کردیا ہے کہ وہ شمالی وزیرستان میں طالبان کے خلاف ایک بڑا فوجی آپریشن شروع کرنے جارہا ہے یہ پیغام پاکستان کے سیکرٹری دفاع آصف یٰسین ملک کے ذریعے واشنگٹن کے سیکیورٹی حکام کو پہنچایاگیا ہے جو اس وقت یہاں امریکی حکام سے بات چیت میں مصروف ہیں ۔ واشنگٹن کے سیکیورٹی ذرائع کا کہنا ہے کہ پاکستان امریکہ سے مسلسل درخواست کررہاتھا کہ وہ ڈرون حملے بند کرے اور امریکہ نے ایسا کردیا تو وہ طالبان کے ٹھکانوں کے خلاف خود فوجی کارروائی کرے گا یہ ذرائع راولپنڈی میں امریکی سنٹرل کمان کے سربراہ جنرل لائیڈ آسٹن کی آمد کے بعد گزشتہ ہفتے سی آئی اے ڈائریکٹر جان برنن کے پاکستان کے خاموش دورے کو بہت اہمیت دیتے ہیں پاکستان اور امریکہ کے درمیان اعلیٰ سطح کے دو طرفہ مذاکرات کے دو سال بعد پہلی مرتبہ امریکہ کے ڈرون حملوں میں تین ماہ کا وقفہ پڑا ہے۔ امریکی حکام کو پاکستان نے بتا دیا ہے کہ یہ فوجی آپریشن کسی وقت بھی شروع ہوسکتا ہے پاکستانی حکام کا کہنا ہے کہ اس وقت ڈیڑھ لاکھ پاکستانی فوج قبائلی علاقوں میں پہلے سے ہی موجود ہے اس لئے آپریشن شروع کرنے کے لئے کوئی زیادہ نقل وحمل کی ضرورت نہیں پڑے گی سیکیورٹی ذرائع کا کہنا ہے کہ امریکی حکام اس پیش رفت اور تعاون کی موجودہ سطح پر بہت مطمئن ہیں اور وہ سمجھتے ہیں کہ پاکستانی حکومت اس وقت آپریشن کرنے کا پختہ ارادہ رکھتی ہے جو ماضی میں انہیں مایوس کرتی رہی ہے اگر آپریشن شروع ہوجاتا ہے تو پھر ڈرون حملوں کی ضرورت نہیں پڑے گی۔

مزید : اسلام آباد /اہم خبریں