سندھ زرعی یونیورسٹی ٹنڈوجام میں دوسری عالمی کانفرنس شروع

سندھ زرعی یونیورسٹی ٹنڈوجام میں دوسری عالمی کانفرنس شروع

 ٹنڈوجام (آن لائن) سندھ زرعی یونیورسٹی ٹنڈوجام میں دوسری عالمی کانفرنس شروع، دنیا کے مختلف ممالک سے سائنسدانوں، ماہرین اور متعلقہ شعبوں کے سربراہان کی کثیر تعداد میں شرکت۔ تفصیلات کے مطابق سندھ زرعی یونیورسٹی کی جانب سے ہائر ایجوکیشن کمیشن کے تعاون سے دوسری عالمی کانفرنس برائے زراعت، خوراک اور اینیمل سائنسز منعقد کی گئی جس کا افتتاح مہران یونیورسٹی جامشورو کے وائس چانسلر ڈاکٹر محمد اسلم عقیلی نے کیا۔ اس موقع پر جرمنی، آسٹریلیا اور ملک کے مختلف زرعی لائیو اسٹاک، ایگریکلچرل انجینئرنگ، پولٹری اور دیگر شعبوں سے متعلقہ اداروں کے ماہرین، اساتذہ، طلبہ، مالیاتی اداروں کے عملداروں کی کثیر تعداد نے شرکت کی۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے مہران یونیورسٹی کے وائس چانسلر داکٹر اسلم عقیلی نے کہا کہ دنیا کے ماہرین کو مل کر عالمی مسائل کا سائنسی حل نکالنا ہوگا اور خاص طور پر ترقی پذیر ممالک میں زراعت، لائیو اسٹاک کو غربت کے خاتمے کیلئے ہتھیار کے طور پر استعمال کرنا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ دنیا سائنسی بنیادوں پر ایک دوسرے کے قریب ہورہی ہے اور انٹرنیشنل عالمی تحقیقی رابطہ پروگرام کے ساتھ مقامی جامعات سائنسی وتحقیقی اداروں کو تحقیقی اور سائنسی تبادلوں پر کام کرنا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ سندھ زرعی یونیورسٹی انتہائی اہم کام انجام دے رہی ہے۔ اب ہمیں دنیا کے اصولوں کے مطابق تحقیقی پر زیادہ توجہ دینا ہوگی۔ اکنامکس کو آپریشن آرگنائزیشن سائنس فاؤنڈیشن کے صدر ڈاکٹر منظور حسین سومرو نے کہا کہ عالمی ادارے ملکی زرعی سائنسدانوں کے ساتھ فنی تبادلہ کے خواہاں ہیں اور اس سلسلے میں ہمارے ادارے اپنی خدمات انجام دے رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ زراعت کا ملکی معیشت میں بڑا اہم کردار ہے اور زرعی ترقی میں اس قسم کی کانفرنس کا انعقاد نہایت اہمیت کا حامل ہے۔

مزید : کامرس