حکومت مدارس کے خلافانتقامی کارروائیوں کا سلسلہ بند کرے،وسیم اختر

حکومت مدارس کے خلافانتقامی کارروائیوں کا سلسلہ بند کرے،وسیم اختر

لاہور(پ ر)جماعت اسلامی کے رکن صوبائی اسمبلی ڈاکٹر سید وسیم اخترنے کہا ہے کہ حکومت مدارس کے خلاف انتقامی کاروائیوں کاسلسلہ بند کرے،مدارس اسلام کے قلعے ہیں جن سے ہمیشہ پیار،محبت،بھائی چارے اور امن وآشتی کاپیغام دیا گیا ہے۔دہشت گردی کو صرف مذہب کے ساتھ جوڑنا قابل مذمت اور دشمن کی سازشوں کاحصہ ہے۔حکمرانوں کی غلط ترجیحات اور فیصلوں سے مسائل جنم لے رہے ہیں۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ آج ملک میں دہشت گردی کی جولہر ہے وہ جنرل (ر) پرویزمشرف کی بزدلانہ پالیسیوں کا نتیجہ ہے       جسے پیپلز پارٹی نے بھی اپنے دور اقتدار میں جاری رکھااور اب موجودہ حکومت بھی ان پالیسیوں کوجاری رکھے ہوئے ہے ۔انہوں نے کہاکہ درحقیقت حکومت اپنی ذمہ داریاں پوری کرنے میں بری طرح ناکام ہوچکی ہے۔ملک میں قانون نام کی کوئی چیز نہیں قانون ہمیشہ اقتدار والوں کے لئے موم کی ناک ثابت ہوا ہے۔ملک میں لاقانونیت کی انتہاء ہوچکی ہے۔حکومت کی اپنی رپورٹ کے مطابق2014میں88767مختلف جرائم کیکیسزریکارڈ ہوئے۔گزشتہ سال411افراد تاوان کے لئے اغواکئے گئے ان میں 81 پنجاب ،190 ، سندھ ، 96 خیبر پختونخواہ ،33 بلوچستان،10اسلام آباد اور ایک محکمہ ریلوے سے اغوا کیاگیا۔2014میں ملک بھر میں13276افراد قتل ہوئے جن میں5953افراد پنجاب میں قتل ہوئے۔132افراد نے خودکشی کی۔33242گاڑیاں چھینی گئیں ان میں بھی سب سے زیادہ تعداد پنجاب میں21072ہے۔انہوں نے کہاکہ جب ایوانوں میں کرپٹ اورمفاد پرست لوگ بیٹھیں گے تو ملک کی ترقی اور عوامی فلاح وبہبود کے منصوبوں پرخاک عمل درآمد ہوگا۔         ضرورت اس امر کی ہے کہ عوام محب وطن قیادت کواعتماد دیں اسی میں ملک وقوم کی خیروبھلائی پنہاں ہے۔ڈاکٹر سید وسیم اختر نے مزیدکہاکہ پاکستان کی عزت،وقار،سلامتی اور بقاء سب کچھ داؤپرلگ چکا ہے۔حکمران ڈیڑھ برس میں ہی عوام دشمن پالیسیوں کی وجہ سے اپنی مقبولیت کھوچکے ہیں۔ڈنگ ٹپاؤپالیسیوں سے ملک چلانے کاتجربہ ناکام ثابت ہواہے۔جب تک ذاتی مفادات سے بالاتر ہوکر ملک وقوم کے مفاد میں فیصلے نہیں کئے جاتے مسائل کم نہیں ہوسکتے۔       ۔ حقیقت یہ ہے کہ چوہدری پرویز الہٰی کے دور حکومت میں ان ذخائر کا انکشاف ہوچکا تھا۔ابتدا صرف

مزید : میٹروپولیٹن 4