سفاری پارک میں شیر کے حملے سے نوجوان کی ہلاکت کامعاملہ، اصل حقائق سامنے آگئے

سفاری پارک میں شیر کے حملے سے نوجوان کی ہلاکت کامعاملہ، اصل حقائق سامنے آگئے
سفاری پارک میں شیر کے حملے سے نوجوان کی ہلاکت کامعاملہ، اصل حقائق سامنے آگئے

  



لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)لاہور کے سفاری پارک میں نوجوان کی شیروں کے حملے میں ہلاکت کا معاملہ حیران کن تفصیلات سامنے آگئیں۔

تفصیلات کے مطابق سفاری پارک کی قریبی آبادی سے تعلق رکھنے والا سترہ سالہ بلال گزشتہ دوروز سے لاپتہ تھا اور اہلخانہ اس کی تلاش میں فکرمند تھے۔ آج میڈیا پر ایک نوجوان کے شیر وں کا شکار ہوجانے کی خبریں سامنے آئیں تولواحقین بھی وہاں پہنچ گئے۔ اور بلال کو وہاں موجود اس کے کپڑوں، جوتے، اوروہاں پڑی درانتی سے پہچانا۔انہیں وہاں بلال کی ہڈیاں اور کھوپڑی ہی ملی جس پر سے تمام گوشت مبینہ طور پر شیر چٹ کرچکے تھے۔

سما ٹی وی کے مطابق غم سے نڈھال لواحقین کا کہنا ہے کہ آج سے کچھ سال پہلے بلال کے ماموں کو بھی سفاری پارک ہی میں قتل کیا گیا تھا جس کے بعد یہ سوال اٹھنے لگے ہیں کہ آیا بلال کو واقعی شیروں نے کھایا یا پھر اسے قتل کیاگیا۔

دوسری جانب پارک انتظامیہ کا دعویٰ ہے کہ وہ دیوار پھلانگ کر شیروں کے علاقے میں گھاس کاٹنے آیا تاہم والدین کا کہنا ہے کہ گھاس تو اس نے قریبی کھیتوں سے کاٹا کیونکہ شیر کے علاقے میں کسی قسم کا چارہ ہے ہی نہیں تو وہ وہاں کیسے کاٹنے کیلئے آسکتا ہے۔

لواحقین کا کہنا ہے کہ جس قدر بلند یہ جالی ہے اسے کوئی بچہ کراس کرہی نہیں سکتا ،لواحقین نے اس شک کااظہارکیا ہے کہ ان کے بچے کو یہاں کسی سازش کے تحت لایا گیاہے۔ٹی وی پر دکھائے گئے جنگلے سے بھی محسوس ہوتا ہے کہ اسے پار کرنا آسان نہیں۔

ادھر لواحقین نے سفاری پارک کے انتظامیہ کے دفاتر پرمشتعل ہو کر حملہ بھی کیا ہے اور توڑ پھوڑ کی ہے۔

اس سے قبل مختلف ٹی وی چینلز پر سفاری پارک انتظامیہ کے حوالے سے کہا گیا تھا کہ بچے کا ذہنی توازن ٹھیک نہیں تھا، اور پھر کہا کہ وہ گھاس کاٹنے کیلئے جنگلہ پھلانگ کر شیروں کے علاقے میں گھس گیا تھا جس کی وجہ سے شیروں نے اسے چیر پھاڑ کر ہلاک کردیا۔

مزید : علاقائی /پنجاب /لاہور