پاکستان کی افغانستان کے ساتھ تجارت میں کمی آگئی

پاکستان کی افغانستان کے ساتھ تجارت میں کمی آگئی
پاکستان کی افغانستان کے ساتھ تجارت میں کمی آگئی

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن) افغانستان کے لیے پاکستان کا تجارتی حجم 2.5 ارب ڈالر سے گھٹ کر ایک ارب ڈالر سے بھی کم ہوگیا ہے.

 پاکستان افغانستان چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری نے اسپیکر قومی اسمبلی کی سربراہی میں قائم افغانستان سے متعلق کمیٹی کو ارسال کردہ ایک تفصیلی رپورٹ میں  انکشاف کیا ہے کہ  افغانستان میں آپریشنل بینکنگ ڈھانچے کی عدم موجودگی میں تیسرے فریق کی ادائیگیوں پر کارروائی کرنے سے بینکوں کا انکار، ڈیوٹی، مالیاتی اصلاحات، دہرا ٹیکس، دونوں میں سے کسی ایک حکومت کی یکطرفہ طور پر ڈیوٹی و ٹیکسوں کے نفاذ، دونوں ممالک میں سامان کی گاڑیوں کی آزادانہ نقل و حرکت، غیر ضروری دستاویزات اور سیکیورٹی چیک اور ٹرانزٹ سہولیات تک رسائی کے باعث تجارتی حجم میں کمی ہوئی۔

رپورٹ میں کاروبار دوست ویزا پالیسی کی عدم موجودگی اور دونوں ممالک کے تاجروں کے لیے سہولتوں، ٹرانزٹ ٹریڈ معاہدے کو حتمی شکل دینے جیسے معاملات کا احاطہ کیاگیاہے۔ جوائنٹ چیمبر کے چئیرمین زبیرموتی والا نے ایکسپریس کو بتایا کہ افغانستان کے ساتھ تجارت کا حجم 5ارب ڈالر ہے لیکن افغانستان میں بینکاری نظام کی عدم دستیابی کی صورت حال میں تیسرے ملک کے ذریعے ادائیگیوں کی سہولت دینا چاہیے۔ حکومت کی جانب سے تاحال افغانستان کے ساتھ روپے میں تجارت کی سہولت نہیں دی گئی ہے اور نہ ہی بارٹر ٹریڈ کی اجازت ہے۔

مزید :

قومی -