شام میں کیمیائی ہتھیاروں کی تیاری، جرمن کمپنیوں نے مدد فراہم کی، جرمن میگزین

شام میں کیمیائی ہتھیاروں کی تیاری، جرمن کمپنیوں نے مدد فراہم کی، جرمن میگزین

 بر لن(آن لائن)ایک جرمن میگزین نے دعویٰ کیا ہے کہ جرمنی کی متعدد کمپنیوں نے کیمیائی ہتھیاروں کی تیاری میں صدر بشار الاسد کی مدد کی تھی۔جرمن جریدے ’’ڈئیر اشپیگل‘‘ نے دعویٰ کیا ہے کہ جرمنی کی متعدد مشہور کمپنیوں نے کیمیائی ہتھیاروں کی تیاری میں شام حکومت کو مدد فرام کی تھی، اور کہا ہے کہ جرمن وزارت خارجہ کی کئی دستاویز سے بھی اس شْبے کو تقویت ملتی ہے۔ اس میگزین نے خفیہ دستاویز کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ ان مشہور کمپنیوں نے بڑے پیمانے پر کیمیائی ہتھیاروں کی تیاری میں دمشق میں حکومت کو 1984ء سے امداد فراہم کرنا شروع کی تھی۔رپورٹوں کے مطابق ان کمپنیوں نے اس بارے میں کسی بھی قسم کی معلومات فراہم کرنے سے انکار کیا ہے اور تمام کا کہنا ہے کہ ان کے پاس اس کاروبار کے بارے میں کوئی بھی ’’دستاویزی ثبوت‘‘ موجود نہیں ہیں۔دریں اثناء تازہ اطلاعات کے مطابق شامی افواج کی فضائی بم باری سے کم از کم بیالیس افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔ اطلاعات کے مطابق ہلاک ہونے والوں میں بچے اور خواتین بھی شامل ہیں۔ شام میں ہلاکتوں کے حوالے سے اعداد و شمار جمع کرنے والی تنظیم ’’سیرئین آبزویٹری فار ہیومن رائٹس‘‘ نے کہا ہے کہ یہ ’’قتل عام‘‘ دمشق کے مضافات میں واقع اْس علاقے میں کیا گیا۔ جو حکومت مخالف باغیوں کے زیر قبضہ ہے۔اقوام متحدہ کے اعداد و شمار کے مطابق صدر اسد کے خلاف شروع ہونے والی بغاوت کے بعد اسے اب تک شام میں کم از کم دو لاکھ بائیس ہزار افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔دریں اثناء صدر اسد کے مخالف دھڑوں نے ایک مرتبہ پھر شام میں ’’بنیادی جمہوری تبدیلی‘‘ کا مطالبہ کیا ہے۔ ان دھڑوں کا دو روزہ اجلاس مصر کے دارالحکومت قاہرہ میں منعقد ہوا۔ اس اجلاس کا مقصد اپریل میں شروع ہونے والے مذاکرات کے لیے اسد مخالف دھڑوں کو دس نکاتی ایجنڈے پر متحد کرنا ہے۔

مزید : عالمی منظر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...