عراق میں غیرقانونی ہلاکتوں بارے 58 معاملات کی تحقیقات ختم

عراق میں غیرقانونی ہلاکتوں بارے 58 معاملات کی تحقیقات ختم

  

لندن (بیورورپورٹ) عراق میں تعینات رہنے والے برطانوی فوجیوں کے خلاف غیرقانونی ہلاکتوں کے 58 معاملات کی تحقیقات ختم کر دی گئیں تفتیشی ٹیم آئی ہیٹ نے 57افراد پر عائد الزامات کی مزید تفتیش نہ کرنے کا فیصلہ کر لیا برطانوی وزارت دفاع کے مطابق معاملے میں مزید تفتیش نہ کرنے کا فیصلہ فوج میں مقدمہ چلانے کا اختیار رکھنے والے حکام نے کیا یہ اعلان برطانوی وزیرِ اعظم ڈیوڈ کیمرون کی جانب سے اس مطالبے کے بعد سامنے آیا ہے جس میں انہوں نے وطن لوٹنے والے فوجیوں کے خلاف جعلی قانونی دعووں کی بیخ کنی کیے جانے کی بات کی تھی تاہم وکلا کا کہنا ہے کہ کوئی بھی فرد قانون سے بالاتر نہیں اور اختیارات سے تجاوز یا ان کے ناجائز استعمال کے کئی الزمات درست ثابت ہوئے ہیں آئی ہیٹ کا قیام عراقی شہریوں کی جانب سے برطانوی مسلح افواج کے اہلکاروں کے خلاف بدسلوکی کے الزامات کی تحقیقات کے لیے عمل میں لایا گیا تھا فی الوقت یہ ادارے اس قسم کے 1300 الزامات کی تحقیق کر رہا ہے جن میں معمولی مار پیٹ سے لے کر قتل جیسے الزامات شامل ہیں۔

۔ور ان میں سے 280 واقعات میں برطانوی فوجیوں پر غیرقانونی ہلاکتوں کے الزامات لگائے گئے ہیں خیال رہے کہ رواں برس کے آغاز میں عراق کی جنگ کے دوران مبینہ انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی تحقیقات کرنے والی تنظیم کے سربراہ مارک وارک نے کہا تھا ہے کہ عراق میں لڑنے والے برطانوی فوجیوں کو مستقبل میں جنگی جرائم کے مقدمات کا سامنا ہو سکتا ہے عراق جنگ کے دوران برطانوی فوجیوں کی جانب سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی تحقیقات کے لیے حکومت پہلے بھی دو جامع تحقیقات کر چکی ہے۔

فی الوقت یہ ادارے اس قسم کے 1300 الزامات کی تحقیق کر رہا ہے جن میں معمولی مار پیٹ سے لے کر قتل جیسے الزامات شامل ہیں اور ان میں سے 280 واقعات میں برطانوی فوجیوں پر غیرقانونی ہلاکتوں کے الزامات لگائے گئے ہیں۔خیال رہے کہ رواں برس کے آغاز میں عراق کی جنگ کے دوران مبینہ انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی تحقیقات کرنے والی تنظیم کے سربراہ مارک وارک نے کہا تھا ہے کہ عراق میں لڑنے والے برطانوی فوجیوں کو مستقبل میں جنگی جرائم کے مقدمات کا سامنا ہو سکتا ہے۔عراق جنگ کے دوران برطانوی فوجیوں کی جانب سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی تحقیقات کے لیے حکومت پہلے بھی دو جامع تحقیقات کر چکی ہے۔

مزید :

عالمی منظر -