ننگر ہار میں ڈرون حملہ ،ملا فضل اللہ کے مارے جانے کی اطلاعات ،تصدیق نہ ہو سکی

ننگر ہار میں ڈرون حملہ ،ملا فضل اللہ کے مارے جانے کی اطلاعات ،تصدیق نہ ہو سکی
 ننگر ہار میں ڈرون حملہ ،ملا فضل اللہ کے مارے جانے کی اطلاعات ،تصدیق نہ ہو سکی

  

ننگر ہار(مانیٹرنگ ڈیسک) پاکستان کو انتہائی مطلوب طالبان امیر ملا فضل اللہ کے افغانستان میں واقع گھر پر ڈرون حملے میں ملا فضل اللہ ، اس کا بیٹااور ایک خاتون سمیت پانچ افراد مارے گئے ہیں تاہم انٹیلی جنس ذرائع نے اس کی تصدیق نہیں کی ہے۔ذرائع نے دعویٰ کیا ہے کہ حملہ ننگر ہار میں ملا فضل اللہ کے گھر پر کیا گیا۔ حملے کے وقت کالعدم تحریک طالبان پاکستان کا امیر اپنے گھر پر موجود تھا۔ملا فضل اللہ اس وقت ایک اجلاس میں پاکستان میں آنے والے دنوں میں دہشت گردی کی بڑی کارروائیاں کرنے کی منصوبہ بندی کر رہا تھا۔ذرائع کا کہناہے کہ کارروائی پاک فوج اور افغانستان میں موجود امریکی فورسز نے مشترکہ طور پر کی۔ ملا فضل اللہ سانحہ اے پی ایس اور سانحہ چارسدہ سمیت متعدد کارروائیوں میں ملوث تھا۔اس کے بھیجے گئے دہشت گردوں نے ہی معصوم بچوں کا قتل عام کیا تھا۔ واضح رہے کہ آرمی چیف جنرل راحیل شریف نے افغان اور امریکی حکام سے ملا فضل اللہ کی گرفتاری کامطالبہ کیا تھا۔ابھی تک کسی دوسرے ذریعے سے ملا فضل اللہ کی موت کی تصدیق نہ ہو سکی ہے۔یاد رہے کہ 2014میں بھی گلف نیوز نے ہی ملا فضل اللہ کی ہلاکت کا غلط دعوی کیا تھا۔

مزید :

صفحہ اول -