پنجاب بھر کے سرکاری و نجی سکولز آج سے 30جنوری تک بند

پنجاب بھر کے سرکاری و نجی سکولز آج سے 30جنوری تک بند

  

لاہور( اپنے نامہ نگار سے) سردی کی شدید لہر، دھند اور گیس کی قلت کے باعث صوبائی دارالحکومت سمیت صوبہ بھر کے سرکاری و نجی سکولز آج سے ایک ہفتہ کے لئے بند رکھنے کا اعلان کر دیا گیا ہے۔ جس کے باعث آج 26 جنوری سے 31 جنوری تک صوبہ بھر کے تعلیمی ادارے بند رہیں گے۔ اس بات کا فیصلہ وزیر اعلیٰ پنجاب کے حکم پر سیکرٹری تعلیم عبدالجبار شاہین کی جانب سے گزشتہ رات کئے گئے فیصلہ کے بعد جاری کردہ نوٹیفکیشن کی شکل میں کیا گیا ہے۔ جبکہ ذرائع کا کہنا ہے کہ لاہور کے بعض تعلیمی اداروں سمیت پنجاب کے بڑے شہروں میں واقع بعض تعلیمی اداروں میں دہشت گردوں کی ممکنہ وارداتوں کے پیش نظر ایسا فیصلہ کیا گیا ہے۔ گزشتہ رات سیکرٹری تعلیم عبدالجبار شاہین نے اپنی جانب سے جاری کردہ نوٹیفکیشن کے حوالے سے ’’پاکستان‘‘ سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ لاہور سمیت پنجاب بھر میں شدید سردی اور دھند کے باعث کم عمر بچوں کو تعلیمی اداروں میں آنا مشکل ترین مسئلہ بن کر رہ گیا تھا اور اس کے ساتھ گیس کی شدید ترین قلت بھی رکاوٹ بن گئی تھی جس پر ہنگامی بنیادوں پر صوبے بھر کے سرکاری اور نجی تعلیمی ادارے آج سے ایک ہفتہ کے لئے بند رکھنے کا فیصلہ کیا گیا ہے جس کے تحت لاہور کے سرکاری و پرائیویٹ تعلیمی اداروں سمیت پنجاب بھر کے سرکاری و نجی تعلیمی ادارے 31 جنوری تک بند رہیں گے۔ تاہم کالجز اور یونیورسٹیوں میں معمول کے مطابق تعلیمی سرگرمیاں جاری رہیں گی۔ سیکرٹری تعلیم نے ’’پاکستان‘‘ کو بتایا کہ تعلیمی اداروں کو سردی کی شدید لہر اور دھند کے باعث عارضی طور پر ایک ہفتہ کے لئے بند کیا گیا ہے۔ اس میں کسی قسم کی دہشت گردی کی ممکنہ واردات یا واقعہ یا دھمکی کے پیش نظر ایسا فیصلہ نہیں کیا گیا ہے، محض کم عمر بچوں کو شدید سردی کی لہر اور دھند سے بچانے اور شدید سردی کے باعث بیماریوں سے محفوظ رکھنے کے لئے تعلیمی اداروں کوبند رکھنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ سیکرٹری تعلیم کے فیصلہ کے بعد ڈی سی او لاہور کیپٹن (ر) محمد عثمان سمیت صوبہ بھر کے ڈی سی اوز کو ہنگامی بنیادوں پر مراسلے جاری کر دئیے گئے ہیں جس میں صوبہ بھر کے سرکاری و نجی سکولز کو بند رکھنے کے فیصلے پر عملدرآمد کو یقینی بنانے کا حکم دیا گیا ہے۔ سیکرٹری تعلیم نے بتایا کہ اس میں ای ڈی او لاہور پرویز اختر خاں سمیت تمام اضلاع کے ای ڈی اوز اور پرائیویٹ سکولوں کے مالکان کی تنظیموں کو بھی الگ الگ نوٹیفکیشن کی کاپیاں ارسال کر دی گئی ہیں۔ سیکرٹری تعلیم نے مزید بتایا کہ پرائیویٹ سکولز کے مالکان اس حکم پر نامے پر عمل نہ کرنے پر ان کے سکول سات دن کے لئے سیل کر دئیے جائیں گے۔ دوسری جانب محکمہ تعلیم کے اس اعلان کے بعد لاہور کے ایلیٹ سکولوں جن میں گرائمر سکول، ڈی پی ایس، الائیڈ سکولز سمیت دیگر تعلیمی اداروں کی انتظامیہ نے بھی آج صبح سے ایک ہفتہ کے لئے اپنے تعلیمی ادارے بند رکھنے کا اعلان کر دیا ہے۔ دوسری جانب محکمہ تعلیم کے اس اعلان کے بعد رات گئے بچوں اور ان کے والدین میں خوشی کی لہر دوڑ گئی اور بچوں نے محکمہ تعلیم کے فیصلہ پر کہا کہ ’’ ہماری تو موجیں ہو گئی ہیں‘‘۔ حکومت کو سردی کی شدت مزید بڑھنے پر تعلیمی اداروں میں چھٹیوں کے پروگرام میں مزید توسیع کرنا چاہیے تاکہ سردی سے محفوظ رہا جا سکے۔ جبکہ اس کے ساتھ ذرائع کا کہنا ہے کہ سکولوں میں ناقص سیکیورٹی کے انتظامات کے باعث ایسا فیصلہ کیا گیا ہے اور حکومت کی جانب سے اس بات کا فیصلہ کیا گیا ہے کہ اگلے اس ہفتہ کے دوران ایسے پرائیویٹ سکولز جن کی سیکیورٹی غیر تسلی بخش ہوتی ہے انہیں یکم فروری سے کھولنے نہیں دیا جائے گا اور ایسے اداروں کو حکومت سیل کر دے گی۔ اس سلسلہ میں ڈی سی اوز ، ڈی پی اوز سمیت حساس ادارے کے افسران کی ٹیمیں جائزہ لیں گی اور ان کی رپورٹ کے بعد نجی سکولوں کو کھولنے کا نہ کھولنے کا فیصلہ کیا جائے گا۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ صرف بہتر سیکیورٹی کے حامل تعلیمی اداروں کو ہی کھولنے کی اجازت مل سکے گی جس پر پرائیویٹ سکولز مالکان کی ایسوسی ایشن کے مرکزی صدر ادیب جاودانی نے شدید ردعمل کا اظہار کیا ہے اور کہا ہے کہ سیکیورٹی انتظامات حکومت کی ذمہ داری ہے، حکومت جان بوجھ کر پرائیویٹ تعلیمی سیکٹر کو تنگ کر رہی ہے۔

مزید :

صفحہ اول -