پبی میں سانحہ چارسدہ کے بعد تعلیمی اداروں میں سی سی ٹی وی کیمرے لازمی قرار

پبی میں سانحہ چارسدہ کے بعد تعلیمی اداروں میں سی سی ٹی وی کیمرے لازمی قرار

  

پبی (نما ئندہ پاکستان )چارسدہ حادثے کے بعد نوشہرہ کے کر دی گی ہے۔ CCTVکیمرے نصب ، SOSلازمی قرار دیا گیا ہے ۔دہشتگردوں کے خلاف نیشنل ایکشن پلان کے تحت کاروائیاں تیز کردی گی ہیں ۔امن و امان برقرار رکھنے میں کسی بات پر سمجھوتانہیں کیا جاے گا۔پاک آرمی کے ساتھ مل کر روزانہ کی بنیادوں پر سرچ اینڈ سٹراہیک آپریشنز کیے جا رہے ہیں۔غیر قانونی طور پر مقیم افغانیوں کے خلاف بھی منظم کاروائی جاری ہے ۔عوامی تعاون کی بدولت ہی دہشتگردوں کے خلاف جاری جنگ جیتی جا سکتی ہے ۔ ) ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر واحد محمودتفصیلات کے مطابق۔دسٹرکٹ پولیس آفیسر واحد محمود نے اپنے اخباری بیان میں کہا ہے کہ چارسدہ باچہ خان یونیورسٹی حملہ دراصل دہشگردوں کی بوکلاہٹ کا نتیجہ ہے ۔اللہ کے کرم سے دہشتگردوں کو ان کے انجام تک پہنچا کر دم لینگے۔دہشتگردوں کے ساتھ ساتھ ان کے سہولت کاروں کو بھی نہیں بخشا جاے گا۔دہشتگردوں نے ہمارے مستقبل پر بذدلانہ حملہ کیا ہے ۔نوشہرہ میں سکیورٹی ہائی الرٹ کردی گی ہے۔گشت بڑھا دیا گیا ہے اور خاص طور پر سکولوں ،کالجوں ،یونیورسٹیوں کی سکیورٹی سختی سے چیک کی جاری ہے ۔ CCTVکیمرے ،SOSالرٹ نظام لازمی قراردیا گیا ہے ۔ جن کی سکیورٹی کمزور ہو انہیں پہلے مرحلے میں ایڈوائزری نوٹس جاری کیے جائینگے اگر سکیورٹی پھر بھی ٹھیک نہ ہو تو ایسے تعلیمی اداروں کے خلاف FIRکیے جائینگے۔اس بعد بند کردئیے جائینگے۔بچوں کے مستقبل سے کھیلنے کی ہر گز اجازت نہیں دی جاے گی۔ایکشن پلان کے تحت کاروائیاں تیز کر دی گی ہیں امن وامان برقرار رکھنے کے لیے کسی بات پر سمجھوتا نہیں کیا جاے گا۔پاک آرمی کے ساتھ مل کر سرچ اینڈ سٹرائیک آپریشن روزانہ کی بنیاد کیے جارہے ہیں۔غیر قانونی طور پر مقیم افغانیوں کے خلاف کاروائیاں کیجارہی ہیں ۔عوام بھی اپنے اردگرد مشکوک افراد، شاپر ،بیگ،گاڑی وغیرہ پر نظر رکھیں اور فوری طور پر مقامی پولیس کو مطلع کریں۔کیونکہ دہشتگردوں کے خلاف جنگ عوامی تعاون کی بدولت جیتی جا سکتی ہے

مزید :

کراچی صفحہ اول -