قومی اسمبلی ، اسلام آبادئیکورٹ میں ججوں کی تعداد بڑھانے کابل منظور، اپوزیشن کی ترامیم مسترد

قومی اسمبلی ، اسلام آبادئیکورٹ میں ججوں کی تعداد بڑھانے کابل منظور، اپوزیشن ...

  



اسلام آباد (آئی این پی،صباح نیوز) قومی اسمبلی میں اپوزیشن کی مخالفت کے باوجو د اسلام آ باد ہا ئیکورٹ ایکٹ2010میں مزید ترمیم کرنے کا بل 2019 ء کثرت رائے سے منظور کرلیا گیا، اپوزیشن ارکان کے تمام ترامیم مسترد کردی گئی،قائمہ کمیٹیوں کی تشکیل اور ارکان کی تبدیلی کا اختیار(بقیہ نمبر16صفحہ12پر )

سپیکر کو دینے کے حوالے سے وزیر مملکت محمد علی کی تحریک بھی متفقہ طور پر منظور کر لی۔ اپوزیشن ارکان شاہد خاقان عباسی، سید نوید قمر ، احسن اقبال ،ڈاکٹر نفیسہ شاہ و دیگر نے ایوان میں اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ یہ ایک اہم بل ہے، حکومت عجلت کا مظاہرہ کیوں کررہی ہے اور عددی اکثریت کی بنا پر بل کو بلڈوز کررہی ہے۔اپوزیشن ارکان نے کہا کہ اسلام آباد ہائی کورٹ میں 6میں سے 3ججوں کی آسامیاں ابھی تک خالی ہیں، ان حالات میں ججز کی تعداد میں اضافہ کیوں کیا جا رہا ہے، ترمیم لائی جائے کہ ججز بھرتی ہو نے سے پہلے گزشتہ پانچ برسوں میں جمع کرائے گئے ٹیکسوں کی تفصیلات پیش کریں وگرنہ بل سے شکوک پیدا ہوں گے کہ نئے ججز بھرتی کر کے ایک نئی اکثریت بنائی جارہی ہے جبکہ آمروں کے دور حکومت میں ایسی صورتحال بنائی جاتی تھی۔اپوزیشن ارکان نے کہا کہ بل کے تحت صوبوں کو اسلام آباد ہائیکورٹ میں برابر نمائندگی ہونی چاہیے،اس پر قدغن لگانا درست نہیں جبکہ ججز کے انتخاب میں شفافیت ہونی چاہیے۔اپوزیشن ارکان نے کہا کہ جوڈیشل کونسل ججوں کو منتخب کرتی ہے،اس حوالے سے پارلیمانی کمیٹی ربڑا سٹیمپ ہے اورسپریم کورٹ نے اس حوالے سے رولنگ دی ہے اور پارلیمانی کمیٹی کے تمام اختیارات سلب کردیئے ہیں۔اپوزیشن ارکان نے مزید کہا کہ آئین کے تحت ججزکے انتخاب کے حوالے سے پارلیمانی کمیٹی کوفعال کیا جائے اس سے ججز کے انتخاب کے سسٹم میں شفافیت آئے گی۔قو می اسمبلی میں گزشتہ روز حکومت کی جانب سے اپوزیشن جماعتوں کی قیادت پر تنقید پر احتجاج کیا گیا اور اپوزیشن نے حکومت کو رویہ درست نہ کرنے کی صورت میں ایوان نہ چلنے دینے کی دھمکی دیدی۔پاکستان پیپلز پارٹی کے راہنما راجہ پرویز اشرف نے کہاکہ گزشتہ روز ایوان میں حکومت نے جان بوجھ کر ماحول خراب کیا،ہماری قیادت پر رقیق حملے کئے گئے،حکومت کارویہ اگر ایسا رہا تو ہاؤس نہیں چلنے دیں گے۔وفاقی وزیر پارلیمانی امور علی محمد خان نے کہا کہ ایوان چلانا حکومت اور اپوزیشن دونوں کی ذمہ داری ہے، اپوزیشن اپنی ذمہ داری پوری کرے،سپیکر کی جانب سے گفتگو کی اجازت نہ ملنے پر پیپلز پارٹی کے رکن سید نوید قمر نے کورم کی نشاندہی کردی،کورم مکمل نہ ہونے پر اجلاس کی کاروائی ملتوی کی گئی۔

قومی اسمبلی

مزید : ملتان صفحہ آخر