پنشن فراڈ کیس : دو ملزموں کو 10‘10سال قید ‘ بھاری جرمانے کا حکم

پنشن فراڈ کیس : دو ملزموں کو 10‘10سال قید ‘ بھاری جرمانے کا حکم

ملتان(وقائع نگار)جج احتساب عدالت ملتان نے نیشنل بنک پنشن فراڈ کیس میں ملوث دو ملزموں کو مجموعی طور پر 10،10 سال قید، 5،5 کروڑ روپے جرمانہ ادا کرنے کے ساتھ تمام جائیداد ضبط کرنے کی سزا، ایک ملزم کو اشتہاری قرار دینے جبکہ 16 ملزموں کو بری کرنے کا حکم دیا ہے۔ فاضل عدالت میں نیب ملتان کی جانب سے ریفرنس دائر کیا گیا تھا کہ نیشنل بنک مین برانچ مظفر گڑھ میں افسران و اہلکاروں (بقیہ نمبر37صفحہ12پر )

نے دیگر پرائیویٹ ملزموں کے ساتھ مل کر ریٹائر ملازمین کے پنشن اکاؤنٹس سے جعلی دستاویزات اور دستخطوں کے ساتھ فراڈ کرتے ہوئے 45 کروڑ روپے سے زائد رقم نکلوا کر خرد برد کر لی جس پر ملزموں کو گرفتار کر کے تفتیش مکمل ہونے کے بعد ملزموں کے خلاف ریفرنس پیش کیا گیا ہے۔ فاضل عدالت میں ملزموں کے مطابق وہ بے لکل بے گناہ ہیں اور ان کو بدنیتی سے مقدمہ میں ملوث کیا گیا ہے کہ جبکہ تفتیش میں بھی ان کے خلاف کوئی بھی ثبوت سامنے نہیں آ سکا ہے اس لئے ان کو بری کرنے کا حکم دیا جائے۔ فاضل عدالت نے ریفرنس کی سماعت کے بعد ملزموں غلام شبیر اور نذر عباس کو قید و جرمانے کی سزا کا حکم دیا ہے۔ فاضل عدالت نے عدالت پیش نہیں ہونے پر ملزم منتظر زیدی کے دائمی وارنٹ گرفتاری جاری کرتے ہوئے اشتہاری قرار دینے کا حکم دیا ہے۔ فاضل عدالت نے شک کا فائدہ دیتے ہوئے ملزموں حاجی رب نواز، شعیب منظور، خادم حسین، غلام یسین، خالد مقصود، محمد اجمل، کامران سعید، قیصر عباس، مناظر حسین، عزیز الرحمن، محمد صفدر، شہریار، مشتاق احمد، مبشر حسین، نبیل رضا جعفری اور غلام حسین کو بری کرنے کا حکم دیا ہے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر