محکمہ انہار ‘ کرپشن سکینڈل بے نقاب ‘ فائلیں اِدھر اُدھر کرنیکا انکشاف

محکمہ انہار ‘ کرپشن سکینڈل بے نقاب ‘ فائلیں اِدھر اُدھر کرنیکا انکشاف

  



بہاولپور(ڈسٹرکٹ رپورٹر)محکمہ انہار کرپشن سیکنڈل میں ملوث افسران کی کرپشن بے نقاب ہونے کے باوجود نیب اورسیکرٹری انہارنے خاموشی اختیار کر لی تفصیل کے مطابق سابق چیف انجینئر وقارحسین وڑائچ، ایکسین ساجدمحمود، مہرمنظور حسین، محمددانش، عارف حسین گجر، شوکت حیات اوردیگرنے اربوں روپے کے منصوبہ جات کو ذاتی مفادات کی خاطر بربادکیا بوگس بل بناکر منصوبہ جات کاغذوں(بقیہ نمبر38صفحہ12پر )

کی حدتک محددورکھے ٹھیکیداروں کو کروڑوں روپے کی پیشگی ادائیگیاں کرکے محکمہ کونقصان پہنچایا تھاسابق چیف انجینئر انہار وقار حسین وڑائچ کی اربوں روپے کی کرپشن منظرعام پرآچکی ہے باوثوق ذرائع نے انکشاف کیاہے کہ موصوف نے اپنے منظورنظر ساجد محمود ایکسین احمدپور شرقیہ مہرمنظورحسین ایکسین میلسی سائفن محمددانش ایکسین ڈالس ڈویژن عارف حسین گجرایکسین ہاکڑہ شوکت حیات ایکسین رحیم یارخان کے کینال ڈویژن میں2 ارب روپے ہاکڑہ کینال ڈویژن میں سو ارب روپے میلسی سائفن ڈویژن میں5 ارب رحیم یارخان کینال ڈویژن میں60 کروڑ جاری ہوئے تھے وہاں پرناقص میڑیل کااستعمال کرکے بھاری کمیشن وصول کیاگیا چاچڑاں سمکہ بندکی تعمیر کی آڑمیں ایک ارب کے قریب فرضی ادائیگیاں کی گئی ہیں جوکہ ریکارڈ کی حدتک محددو ہیں ہاکڑہ کینال ڈویژن میں ٹھیکیدار افسران نے ملی بھگت کرکے نہر3R/6R کے اسٹیمیٹ میں سے پکاورک کے کاغذ نکال کراپنی طرف سے35 کروڑ روپے کی لیڈکی مٹی ایٹم شامل کیاگیا اس کرپشن میں ایس ڈی او حافظ محمود سب انجینئر افضل ندیم چن سب انجینئر شبیرکاہلوں سب انجینئر محمداحمدملوث پائے گئے انہیں معطل کرکے پیڈاایکٹ کے تحت کاروائی کرنے کی بجائے من پسندافسران ایس ڈی اوتنویر احمدسب انجینئر شیخ شاہد پرمشتمل خودساختہ کمیٹی بنادی انہوں نے معاملہ کھوہ کھاتے لگادیا تھاجبکہ اس جعلی اورفرضی کام کے عوض ایکسین شیخ اطہرنے5 کروڑ روپے کی ٹھیکیدار کو ادائیگی کرڈالی تھی۔ ذرائع نے انکشاف کیاہے کہ چیف انجینئرکے منظورنظرسب انجینئرز شیخ شاہد اورچوہدری اشرف دیگی سیکشن میں تعینات ہیں رحیم یارخان اورکینال ڈویژن کے تمام ایڈمنسٹریٹو اختیارات بھی سب انجینئر چوہدری اشرف کودے رکھے تھے اس نے سرکاری ریسٹ ہاؤس پربھی قبضہ جما رکھاہے۔ ڈالس کینال ڈویژن میں افسران نے ملی بھگت کرکے ٹھیکیدار کو پیشگی ڈیڑھ ارب روپے کی ایڈوانس ادائیگی کرکے45 کروڑ روپے کمیشن کھراکیا تھا اس کرپشن میں سب انجینئر چوہدری محمداشرف سب انجینئر شیخ شاہد اورایس ڈی او تنویراحمدایکسین محمددانش ملوث ہیں اورٹھیکیدار کام ادھوراچھوڑ کرفرار ہوچکاہے اس طرح مجموعی طورپر11 ارب روپے کے ترقیاتی کامو ں پرڈیڑھ ارب روپے کمیشن وصول کیاگیاہے۔اربوں روپے کی کرپشن بے نقاب ہونے پرچیئرمین نیب نے سخت نوٹس لیتے ہوئے ڈی جی نیب پنجاب کو کاروائی کرنے کاحکم دیا تو ڈی جی نیب پنجاب لاہور کے دفترمیں فائل سردخانے کی نظرکردی گئی جبکہ اینٹی کرپشن بہاولپورنے گریس کنٹرکشن کمپنی کو موبائلزیشن کی مدمیں کروڑوں روپے کی ادائیگیاں کرکے خزانہ سرکار کو نقصان پہنچانے پرسابق چیف انجینئر انہار وقار حسین وڑائچ کوگرفتار کرلیاتھا جبکہ دیگر ملزمان اورٹھیکیدار کیخلاف تاحال کوئی کاروائی عمل میں نہ لائی گئی ہے ۔ اس حوالے سے چیف انجینئر انہار بہاولپورزون عابدمسعود کے علم میں بھی کرپشن کے معاملات لائے گئے توانہوں نے بھی چشم پوشی اختیارکی۔ اربوں روپے کی کرپشن میں ملوث کسی بھی آفیسرکیخلاف بھی کاروائی عمل میں نہ لائی گئی۔ اس حوالے سے جب چیف انجینئرانہار عابد مسعود سے رابطہ کیاگیا توانہوں نے کہاکہ ان کی تعیناتی سے پہلے کی کرپشن ہے اس پروہ کوئی جواب نہ دہ سکتے ہیں۔ عوامی سماجی حلقوں اورکاشتکارتنظیموں نے شدیداحتجاج کرتے ہوئے چیف جسٹس آف پاکستان، چیئرمین نیب، وزیراعلی پنجاب اور دیگرسے فوری نوٹس لینے کامطالبہ کیاہے۔

کرپشن سکینڈل

مزید : ملتان صفحہ آخر