ملک میں اسلام کا نام لینے والوں کو بھی مصیبتوں اور پریشانیوں کا سامنا ہے : مولانا گل نصیب

ملک میں اسلام کا نام لینے والوں کو بھی مصیبتوں اور پریشانیوں کا سامنا ہے : ...

ہنگو(بیورورپورٹ)ختم نبوت کے معاملے پر بات کرنے والوں کو کھلم کھلا دھمکیاں دی جا رہی ہیں،مولانا سمیع الحق سمیت جن علماء کرام اوربے گناہوں کا خون بہایا گیا ہے ان کا حساب مانگیں گے،پاکستان اسلام کے نام پر وجود میں آیا ، یہاں اسلام کے خلاف سازشیں کی جا رہی ہیں،بے ساکیوں کے سہارے کھڑی حکومت اپوزیشن کو آنکھیں نہ دیکھائیں،یہ پہلی حکومت ہے جس میں مذہبی جماعتوں کو ختم نبوت کے موضوع پر جلسے و جلوسوں سے زبردستی روکا،موجودہ حکمران پاکستان اور ملکی معیشت کو تباہ و بردباد کرنے پر تلے ہوئے ہیں، عمران خان کو لانے والے آج خود پشیمان ہے، عزل سے حق و باطل میں معارکے ہو رہے ہیں ، نیٹو اور مذہبی ممالک مسلمانوں کی نسل کشی کی عمل سے باز آجائے، جمعیت علماء اسلام اسلامی اقدار کے فروغ کے لئے اپنا مشن جاری رکھے گی، ان خیالات کا اظہار جے یو آئی خیبر پختونخواہ کے صوبائی امیر مولانا گل نصیب خان ، نائبامیر مفتی کفایت اللہ ، سابق سنیٹر مولانا راحت حسین و دیگر نے دورہ ہنگو کے موقع پر جامعہ فاروقیہ کوٹکی میں علماء کرام،قومی مشران اور بلدیاتی نمائندوں سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پر وفاق المدارس پاکستان کے رکن مہتمم جامعہ سراج الاسلام کاہی مولانا ضیاء اللہ، ضلعی جنرل سیکرٹری مولانا رحمت اللہ زار ، مفتی عبید اللہ، میاں سیف الاسلام کاکاخیل ، مولانا عبد الباقی ، مولانا صدیق ،مولانا عبد الجبار،قاری عمران کا کاخیل و دیگر بھی موجود تھے ۔صوبائی امیر مولانا گل نصیب خان نے کہا کہ باطل قوتیں اسلام کے خلاف پوری دنیا میں بر سر پیکار ہے ، پاکستان میں اسلام کا نام لینے والوں کوبھی مصیبتیں اور پریشانیوں کا سامنا ہے ، پوری دنیا میں مسلمان اخلاقی ، سماجی اور مذہبی الجھنوں اور بدحالی سے دوچار ہے ، ایسے میں اسوۃ حسنہ پر عمل کرتے ہوئے ہم پھرسے عزت اور وقار کو بحال کر سکتے ہیں،انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت میں ختم نبوت کے موضوع پرجلسے کرنے والوں کو فوری گرفتار کیا جاتا ہے ، جمعیت علماء اسلام کا شروع سے موقف رہا ہے کہ موجودہ حکمران یہودیوں کے ایجنڈے پر گامزن ہے اور حکومت میں آکریہودیوں کے سارے وعدے پورے کرنا چاہتی ہے لیکن ہربار جمعیت علماء اسلام نے سازشوں کو بے نقاب کر کے ناکام بنا دیا ہے۔انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت کی ناقص پالیسوں سے ملکی معیشت کا پہیہ جام جبکہ ملک میں مہنگائی کا ایک طوفان برپا ہو گیا ہے ۔مولانا گل نصیب خان و دیگر نے کہا کہ آج پوری مسلم دنیا کے حکمران آمریکہ کے سامنے گھٹنے ٹھیک چکے ہیں اور بین الاقوامی عدالتیں اسلام کے خلاف فیصلے دے رہے ہیں ، ایسے میں جمعیت علماء اسلام خاموش نہیں بیٹھ سکتی ، انہو ں نے کہا کہ پاکستان اسلام کے نام پر بنا تھا اور پاکستان میں اسلام نظام کے علاوہ کسی اور نظام کی کوئی گنجائش نہیں ،انہوں نے کہا کہ اسمبلیوں میں اور اسمبلیو ں سے باہر ہم اسلام اور پاکستانی قوم کے حقوق کی جنگ لڑ رہے ہیں، انہوں نے خبر دار کیا کہ پاکستان میں جید علماء کرام کی شہادتیں اور مولانا سمیع الحق کا خون رائیگاں نہیں جائیگا ۔ مولانا گل نصیب خان و دیگر مقررین نے کہا کہ خطے کا امن افغانستان میں پائیدار امن سے وابستہ ہے ، پاکستان اور افغانستان ملکر علاقے میں امن کے لئے کام کریں ۔مولانا گل نصیب خان نے کہا کہ پاکستان کے قانون کے اندر رہتے ہوئے عوام کو اُن کے جائز حقوق دلانے کے لئے جمعیت علماء اسلام مولانا فضل الرحمان کی قیادت میں ہر فورم پر اپنے جدو جہد جاری رکھے گی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان بد ترین حالات سے گزر رہا ہے ایسے میں سیاسی جماعتوں کو ذیادہ ذمہ داری کا مظاہرہ کرنا ہوگا ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر