وہ 10 فیصد لوگ جن پر HIVوائرس اثر نہیں کرتا، سائنسدانوں نے انتہائی حیران کن وجہ بھی بتادی

وہ 10 فیصد لوگ جن پر HIVوائرس اثر نہیں کرتا، سائنسدانوں نے انتہائی حیران کن وجہ ...
وہ 10 فیصد لوگ جن پر HIVوائرس اثر نہیں کرتا، سائنسدانوں نے انتہائی حیران کن وجہ بھی بتادی

  


لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) ایچ آئی وی وائرس تاحال لاعلاج ہے اور اس کا خیال ہی کسی کو خوفزدہ کردینے کے لیے کافی ہے لیکن آپ کو یہ جان کر حیرت ہو گی کہ 10فیصد لوگ ایسے ہیں جن پر یہ وائرس اثر ہی نہیں کرتا۔ eurekalert.org کے مطابق یہ انکشاف یونیورسٹی آف لیورپول کے سائنسدانوں نے یورپی باشندوں پر کی جانے والی تحقیق میں کیا ہے۔ انہوں نے بتایا ہے کہ ”یورپ میں لگ بھگ 10فیصد لوگ ایسے ہیں جن پر اس لاعلاج مرض کا وائرس اثر نہیں کرتا اور اس کی وجہ یہ ہے کہ ان لوگوں میں ایک جینیاتی میوٹیشن پائی جاتی ہے جسے CCR5-A32کہا جاتا ہے۔ ان لوگوں کے جینز میں یہ تبدیلی ارتقائی طور پر رونما ہوئی ہے۔ قرون وسطیٰ میں طاعون کی وباءپھیلی تھی جو لاکھوں افراد کو نگل گئی۔ اسی وباءکے نتیجے میں ان لوگوں کے جینز میں یہ تبدیلی آئی۔

تحقیقاتی ٹیم کے سربراہ پروفیسر کرسٹوفر ڈنکین کا کہنا ہے کہ ”ایچ آئی وی وائرس طاعون کی اس وباءکے بہت عرصہ بعد منظرعام پر آیا۔ چنانچہ یہ امر حیران کن ہے کہ ان کے جسم میں ہونے والی یہ تبدیلی اس وائرس کے خلاف کیسے مزاحم ہو گئی۔قرون وسطیٰ میں پھیلنے والی طاعون کی وباءنے 300سال تک یورپ کو اپنی گرفت میں لیے رکھا اور جو شخص بھی اس میں مبتلا ہوتا تھا اس کی موت یقینی ہوتی تھی۔ یہی وجہ ہے کہ ان لوگوں کے جسم میںارتقائی طور پر اس وباءکے خلاف مزاحمت پیدا ہونی شروع ہوئی اورجینز میں یہ تبدیلی آ گئی جو انہیں اب ایچ آئی وی کے وائرس سے بھی محفوظ رکھتی ہے۔“

مزید : تعلیم و صحت