ہمارا کیا بنے گا؟ افغان حکومت کو جان کے لالے پڑے ہوئے ہیں :ایاز امیر

ہمارا کیا بنے گا؟ افغان حکومت کو جان کے لالے پڑے ہوئے ہیں :ایاز امیر
ہمارا کیا بنے گا؟ افغان حکومت کو جان کے لالے پڑے ہوئے ہیں :ایاز امیر

  



لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن)تجزیہ کار ایاز امیر نے کہاہے کہ اس وقت افغانستان کی حکومت کوجان کے لال پڑے ہوئے ہیں کہ ہمارا بنے گا کیا؟ طالبان نے امریکہ کی فوری جنگ بندی کی بات نہیں مانی ، اتنے طویل دورانیے کے مذاکرات اس سے قبل طالبان اور امریکہ میں نہیں ہوئے ۔

دنیانیوز کے پروگرام ”تھنک ٹینک“ میں گفتگو کرتے ہوئے ایاز امیر نے کہا کہ طالبان نے فوری جنگ بندی کی بات نہیں مانی ، اتنے طویل دورانیے کے مذاکرات اس سے قبل طالبان اور امریکہ میں نہیں ہوئے ۔ انہوں نے کہا کہ زلمے خلیل زاد نے ٹرمپ کی ”باٹم لائن“ کو ایک اعلامیے کی شکل دینے کی کوشش کی ہے ،امریکی سٹیبلشمنٹ اس معاہدے کے حق میں نہیں تھی ، امریکی افغانستان سے نکل رہے ہیں ، اس سے روس اور چین کو کوئی تشویش نہیں ہوگی ، البتہ بھارت ، ازبکوں اور تاجکوں کو تکلیف ہوگی ۔

ان کا کہنا تھا کہ مذاکرات کے حوالے سے ایسی کوئی خبر نہیں ہے کہ افغانستان میں امریکی بیسز موجود رہیں گے اور طالبان یہ بات مانیں گے بھی نہیں ، انہوں نے کہا کہ امریکہ افغانستان سے مرحلہ وار جائیگا ، اس وقت افغانستان کی حکومت کوجان کے لال پڑے ہوئے ہیں کہ ہمارا بنے گا کیا؟

مزید : قومی