آئی جی پی کا دورہ ہنگو، نظر انداز کئے جانے پر صحافیوں کا شدید احتجاج

  آئی جی پی کا دورہ ہنگو، نظر انداز کئے جانے پر صحافیوں کا شدید احتجاج

  



ہنگو(بیورورپورٹ) آئی جی خیبر پختونخواہ کے دورہ ہنگو کے دوران صحافیوں کو نظر انداز کئے جانے پر صحافیوں کا شدید احتجاج، پولیس حکام کو اپنا رویہ تبدیل کرنے کی دھمکی دے دی۔ ہنگو کے صحافی برادری نے ہمیشہ امن اور علاقائی کے ترقی کے لئے پولیس کے ساتھ ضرورت سے ذیادہ تعاون کیا ہے،نتیجے میں پولیس نے ہمیشہ صحافی برادری کو نظر انداز کرنا اپنا وطیرہ بنا لیا ہے، اگر پولیس نے اپنا رویہ تبدیل نہ کیا تو صحافی برادری بھی اپنے پولیس کے ساتھ تعاون پر نظر ثانی کر سکتی ہے، ان خیالات کا اظہار ہنگو پریس کلب کے سنئیر عہدیداروں اسرار احمد اورکزئی، عبد الصبور خان بنگش،طارق محمو د مغل، فاروق پراچہ،ذاہد مصری خان، محمد فخر الاسلام کاکاخیل، عمر فاروق اورکزئی، سلمان محمو د، شکیل مصری خان، عمر حیات،ذاہد اللہ بنگش، فرمان اللہ و دیگر نے ہنگامی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا، آئی جی خیبر پختونخواہ ثناء اللہ نے ہفتے کے روز ہنگو اور اورکزئی ہیڈ کوارٹر کا دورہ کیا،اس دوران صحافی برادری کو مکمل طور پر لا علم رکھا گیا جس پر ہنگو پریس کلب کے عہدیداروں اور ممبران کا ہنگامی اجلاس طلب کیا گیا جس میں سنئیر صحافیوں نے متفقہ طور پر آئی جی کے دورے کے موقع پر صحافیوں کو مدعوں نہ کئے جانے کی اقدام کی مذمت کی گئی، اس موقع پر سنئیر صحافیوں نے کہا کہ پورا صحافی برادری اپنی ڈومیل سے باہر نکل کر بھی پولیس کے ساتھ مکمل تعاون کرتی ہے اس تعاون کا ہمیشہ پولیس نے نا جائز فائدہ اٹھاتے ہوئے جب بھی کوئی بڑا آفیسر ہنگو آتا ہے تو صحافی برادری کو نظر انداز کر دیا جا تا ہے،یہ رویہ صحافی برادری کے لئے نا قابل برداشت ہے، صحافیوں نے کہا اگر یہی رویہ جاری رہا تو صحافی برادری بھی پولیس کے ساتھ اپنے تعاون پر نظر ثانی کر سکتی ہے۔انہوں نے کہا کہ یہ پہلا موقع نہیں کہ ہنگو پولیس نے ہنگو پریس کلب کے عہدیداروں اور ممبران کو نظر انداز کیا ہے ایسے واقعات مسلسل کے ساتھ ہو رہے ہیں۔ سنئیر صحافیوں نے خبر دار کیا کہ اگر پولیس نے اپنا رویہ نہ بدلہ تو صحافی برادری بھی آئیندہ کا لائحہ مرتب کرنے میں آزاد ہو گی۔

مزید : پشاورصفحہ آخر