فوجداری نظام عدل کے فعال نہ ہونے سے معاشرے کو نقصان ہوگا:جسٹس اطہر من اللہ

فوجداری نظام عدل کے فعال نہ ہونے سے معاشرے کو نقصان ہوگا:جسٹس اطہر من اللہ

  



اسلام آباد(آئی این پی) چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ جسٹس اطہر من اللہ نے کہا ہے کہ کریمنل جسٹس سسٹم کو فعال بنانے میں کردار ادا کرنا ہو گا، فوجداری نظام عدل کے فعال نہ ہونے سے معاشرے کو نقصان ہوگا، بحیثیت ججز ہمیں اپنی ذمہ داریوں کو بھرپور طریقے سے انجام دینا ہوگا۔تفصیلات کے مطابق ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اور سیشن ججز میں تقسیم اسناد کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ نے کہا کہ ورکشاپ کے انعقاد پر فیڈرل جوڈیشل اکیڈمی کا شکرگزار ہوں۔ چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ نے کہا کہ ہم نے پاکستان کی تاریخ میں بہت سے چیلنجز کا سامنا کیا، کرمنل جسٹس سسٹم میں بھی بہت سے چیلنجز کا سامنا ہے، کرمنل جسٹس سسٹم کو فعال بنانے میں کردار ادا کرنا ہوگا۔ جسٹس اطہر من اللہ نے کہا کہ فوجداری نظام عدل کے فعال نہ ہونے سے معاشرے کو نقصان ہوگا، بحیثیت ججز ہمیں اپنی ذمہ داریوں کو بھرپور طریقے سے انجام دینا ہوگا۔ چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ ہمیں پہلے اپنے گھر کو ٹھیک کرنا ہوگا، انصاف کے تقاضوں کو پورا کرنے کے لیے کردار ادا کرنا ہوگا۔انہوں نے مزید کہا کہ آئین پاکستان 1973 میں بنا، فوری و سستے انصاف کی فراہمی ہر شہری کا بنیادی حق ہے، کیا یہ حق انہیں فراہم کیا جا رہا ہے؟ ماڈل کورٹس کا قیام فوری اورسستے انصاف کی جانب ایک قدم ہے۔

جسٹس اطہر من اللہ

مزید : صفحہ آخر