کورونا وائرس لاک ڈاﺅن کے چھوٹے بچوں پر انتہائی خطرناک اثرات، ماہرین نے وارننگ دے دی

کورونا وائرس لاک ڈاﺅن کے چھوٹے بچوں پر انتہائی خطرناک اثرات، ماہرین نے ...
کورونا وائرس لاک ڈاﺅن کے چھوٹے بچوں پر انتہائی خطرناک اثرات، ماہرین نے وارننگ دے دی

  

نیویارک (مانیٹرنگ ڈیسک) کورونا وائرس کی وجہ سے طویل عرصے سے سکول بند ہیں۔ بچے اس پر بظاہر خوش نظر آتے ہیں لیکن حقیقت میں سکولوں کی بندش بچوں اور ان کے والدین کے ذہنوں پر کیا اثرات مرتب کر رہی ہے؟ امریکی ماہرین نے اس حوالے سے ہولناک انکشاف کر دیا ہے۔ میل آن لائن کے مطابق ماہرین کا کہنا ہے کہ سکولوں کی بندش کی وجہ سے بچوں میں ڈپریشن، خود کو نقصان پہنچانے اور خودکشی کی طرف راغب ہونے کی شرح تیزی سے بڑھ رہی ہے۔ اس کے علاوہ والدین بھی سکولوں کی بندش کے سبب ذہنی دباﺅ اور ڈپریشن کا شکار ہورہے ہیں۔ 

رپورٹ کے مطابق امریکہ میں اس حوالے سے خوفناک اعدادوشمار بھی سامنے آ رہے ہیں۔ ریاست لاس ویگاس میں حالیہ ہفتوں میں 18طالب علموں کے خودکشی کر لینے کے بعد بالآخر ریاست میں سکولوں کو کھول دینے کا فیصلہ کر لیا گیا ہے تاکہ مزید بچوں کو ڈپریشن میں جانے اور اپنی جان لینے کے اس انتہائی اقدام سے روکا جا سکے۔ امریکہ و برطانیہ کے بچوں کی صحت کے ماہرڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ ”سکولوں کی بندش کے سبب بچوں میں خود کو نقصان پہنچانے اور خودکشی کرنے سے متعلق خیالات خوفناک حد کو پہنچ چکے ہیں۔ سکولوں کا بند ہونا ان کی ذہنی صحت پر اس قدر سنگین اثرات مرتب کر رہا ہے کہ جس کا کسی نے سوچا بھی نہ تھا۔“ 

ماہرین کی نظر میں یہ صورتحال کس قدر سنگین ہو چکی ہے، اس کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ برطانیہ میں بچوں کی صحت کے تین نامور ڈاکٹروں پروفیسر ڈاکٹر کلیری ہوگ، ڈاکٹر آئیان بیل فورلین اور پروفیسر ڈاکٹر سیجل سیگلانی و دیگر نے حکومت کے نام ایک کھلا خط لکھا گیا ہے جس میں انہوں نے سکولوں کی بندش کے بچوں اور ان کے والدین کی ذہنی صحت پر مرتب ہونے والے انتہائی منفی اثرات کا ذکر کرتے ہوئے سکول کھولنے کی درخواست کی ہے۔ انہوں نے اپنے خط میں لکھا ہے کہ سکولوں میں کورونا وائرس کے پھیلاﺅ کو روکنے کے لیے مناسب اقدامات کرتے ہوئے سکول کھول دیئے جانے چاہئیں تاکہ بچوں اور ان کے والدین کو اس سنگین صورتحال سے بچایا جا سکے۔

مزید :

کورونا وائرس -