کورونا وائرس کے چند مریض صحت یاب ہونے کے بعد ہکلانے لگے، نیا انتہائی خطرناک سائیڈ ایفیکٹ سامنے آ گیا

کورونا وائرس کے چند مریض صحت یاب ہونے کے بعد ہکلانے لگے، نیا انتہائی خطرناک ...
کورونا وائرس کے چند مریض صحت یاب ہونے کے بعد ہکلانے لگے، نیا انتہائی خطرناک سائیڈ ایفیکٹ سامنے آ گیا

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) امریکہ میں کورونا وائرس کے صحت مند ہونے والے مریضوں میں اس موذی وائرس کا ایک اور خطرناک سائیڈ ایفیکٹ سامنے آ گیا۔ میل آن لائن کے مطابق امریکہ میں کورونا وائرس سے صحت مند ہونے والے دو ایسے افراد اب تک سامنے آ چکے ہیں جنہیں اس مرض سے صحت مندی کے بعد ہکلانے کا مسئلہ لاحق ہو گیا۔ ان میں ایک امریکی ریاست ٹیکساس کے شہر ہوسٹن کے رہائشی 40سالہ ٹیچر پیٹرک تھورنٹن ہیں۔

پیٹرک کا کہنا تھا کہ ”میں نے ساری زندگی کلاس روم میں طالب علموں کے ساتھ گفت و شنید ہی کی ہے اور کبھی زندگی میں ایک بار بھی میں ہکلایا نہیں ہوں۔ کورونا وائرس کی ابتلاءکے دوران سینے میں درد اور سانس لینے میں دشواری کے ساتھ ساتھ میری آواز بھی بند ہو گئی تھی۔ آہستہ آہستہ میری آواز تو واپس آ گئی مگر اس کی روانی واپس نہ آئی اور جب میں نے بولنا شروع کیا تو میں ہکلا رہا تھا۔ “ اس عارضے میں مبتلا ہونے والا دوسراآدمی نیویارک کا رہائشی بریان ہے۔ اس میں بھی جب کورونا وائرس کی علامات شدید ہوئی تھیں تو اس کی آواز بھی غائب ہو گئی تھی اور جب اس نے دوبارہ بولنا شروع کیا تو اس میں ہکلاہٹ آ چکی تھی۔ماہرین کا کہنا ہے کہ کورونا وائرس لوگوں کی دماغی اور اعصابی صحت پر انتہائی منفی اثرات مرتب کرتا ہے، ممکنہ طور پر یہی نقصان ان میں ہکلاہٹ آنے کی بھی وجہ ہو سکتا ہے۔“

مزید :

کورونا وائرس -