پاکستانی عدالت نے عرب شہزادے اور اس کے ملازمین کو طلب کرلیا

پاکستانی عدالت نے عرب شہزادے اور اس کے ملازمین کو طلب کرلیا
پاکستانی عدالت نے عرب شہزادے اور اس کے ملازمین کو طلب کرلیا

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

خیرپور(مانیٹرنگ ڈیسک) خیرپور کی ایک عدالت نے معدومی کے خطرے سے دوچار تلور کا شکار کرنے پر ایک عرب شہزادے اور اس کے ملازمین کو طلب کر لیا۔ ڈیلی پاکستان گلوبل کے مطابق رضا حسین نامی ایک پاکستانی شہری نے خیرپور ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن کورٹ میں پٹیشن دائر کی تھی جس میں تلور کے غیرقانونی شکار کو رکوانے کی استدعا کی گئی ہے۔ 
رضا حسین نے اپنی درخواست میں کہا ہے کہ ”تلور کی اس قسم کو بین الاقوامی سطح پر معدومی کے خطرے سے دوچار قرار دیتے ہوئے اس کا شکار ممنوع قرار دیا گیا ہے۔ تاہم ایک عرب شہزادے نے اچارو تھر میں اس تلور کے شکار کے لیے کیمپ لگا رکھے ہیں۔ جب مقامی لوگوں نے انہیں اس پرندے کے شکار سے روکنے کی کوشش کی تو انہوں نے مقامی لوگوں کو سنگین نتائج کی دھمکیاں دینی شروع کر دیں۔ نارا ٹاﺅن کے لوگ تلور کے غیرقانونی شکار پر احتجاج بھی کر چکے ہیں۔“
رپورٹ کے مطابق جس عرب شہزادے کو عدالت کی طرف سے طلب کیا گیا ہے، اس کی قومیت تاحال سامنے نہیں آ سکی۔ عدالت نے شہزادے کے سٹاف اور سوراہ پولیس سٹیشن کے ایس ایچ او کو بھی طلب کیا ہے۔ایک الگ واقعے میں گزشتہ روز خیرپور پولیس نے 40مقامی لوگوں کو گرفتار کر لیا ہے جو عرب شہزادوں کے تلور کے غیرقانونی شکار کے خلاف احتجاج کر رہے تھے۔ مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ یہ شہزادے نہ صرف معدومی کے خطرے سے دوچار پرندوں کا شکار کرتے ہیں بلکہ ان کی موجودگی کی وجہ سے مقامی لوگوں کی زندگی بھی اجیرن ہو جاتی ہے، کیونکہ ان کی وجہ سے مقامی لوگوں کو کئی علاقوں میں داخلے کی اجازت نہیں ہوتی۔