برطانیہ پاکستان میں سرمایہ کاری بڑھا رہا ہے : ڈپٹی ہائی کمشنر 

برطانیہ پاکستان میں سرمایہ کاری بڑھا رہا ہے : ڈپٹی ہائی کمشنر 

  

لاہور(سٹی رپورٹر) برطانوی ڈپٹی ہائی کمشنر اور پاکستان کے لیے ٹریڈ ڈائریکٹر سارہ مونی نے کہا ہے کہ برطانیہ پاکستان میں تجارت اور سرمایہ کاری کو بڑھانے کے لیے کام کر رہا ہے ، ہائی کمیشن ان مصنوعات کی شناخت کے لیے تحقیق کر رہا ہے جو برطانیہ کی مارکیٹ میں نمایاں کامیابی حاصل کر سکیں۔ وہ لاہور چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری میں خطاب کر رہی تھیں۔ لاہور چیمبر کے صدر کاشف انور اور سینئر نائب صدر چوہدری ظفر محمود نے بھی اس موقع پر خطاب کیا۔ڈپٹی ہائی کمشنر نے کہا کہ سیلاب نے پاکستان کے لیے تباہی مچا دی ہے ، یہ بہت حوصلہ افزا ہے کہ برطانوی شہریوں نے سیلاب متاثرین کی امداد کے لیے 100ملین پاﺅنڈ عطیہ دیا ہے، برطانوی حکومت کا ڈیزاسٹر ریلیف فنڈ ہے اور برطانیہ کے شہری اس فنڈ میں اپنا حصہ ڈال رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہمارے پاس پاکستان سے 96 فیصد ڈیوٹی فری پروڈکٹس آرہی ہیں اور باقی پر کام جاری ہے۔

۔ انہوں نے کہا کہ تعلیم ہمارا ترجیحی شعبہ ہے جہاں ہم پاکستانی اداروں کے ساتھ تعاون اور تعاون کو بڑھانا چاہتے ہیں اور ہم یونیورسٹی کی سطح سے نیچے کی تعلیم کو بھی سپورٹ کرنے کے خواہاں ہیں، پائیدار ترقی، گرین انرجی ،انفراسٹرکچر کی ترقی اور صحت کا شعبہ بھی ہماری ترجیحات میں شامل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں پاکستان اور برطانیہ کے درمیان شراکت داری کے انداز کو تبدیل کرنے کے لیے اقدامات اٹھانا چاہئیں۔ لاہور چیمبر کے صدر کاشف انور نے کہا کہ برطانیہ پاکستان کے بڑے تجارتی شراکت داروں میں سے ایک رہا ہے اور اس وقت پاکستانی مصنوعات کی چوتھی بڑی برآمدی منڈی ہے۔ پاکستان کی برطانیہ کو برآمدات میں ٹیکسٹائل کا بہت زیادہ غلبہ ہےدوطرفہ تجارتی حجم جو اس وقت تقریباً 3 بلین ڈالر ہے اسے کم از کم 10 بلین ڈالر تک لے جایا جاسکتا ہے۔ لاہور چیمبر کے صدر نے کہا کہ ہم شکر گزار ہیں کہ بریگزٹ کے بعد بھی برطانیہ نے ہمیں اسی سطح کی مارکیٹ تک رسائی فراہم کی ہے جیسا کہ جی ایس پی پلس اسکیم کے تحت تھا۔ ہمیں معلوم ہوا ہے کہ برطانیہ کی حکومت نے ترقی پذیر ممالک کی تجارتی اسکیم شروع کی ہے جس کے ذریعے پاکستان برطانیہ کو ڈیوٹی فری برآمدات سے مستفید ہوتا رہے گا۔ مزید برآں یہ اسکیم پاکستان سے برآمد کی جانے والی 150 سے زائد مصنوعات پر ٹیرف ختم کر دے گی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کو شدید معاشی چیلنجز کا سامنا ہے۔ 2022 کے تباہ کن سیلاب نے پاکستان میں 33 ملین افراد کو متاثر کیا اور 1,700 سے زائد افراد اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے۔ مجموعی معاشی نقصانات کا تخمینہ 30 ارب ڈالر سے زیادہ ہے۔ ہاو ¿سنگ، زراعت، لائیو سٹاک اور انفراسٹرکچر کے شعبوں کو سب سے زیادہ نقصان پہنچا۔انہوں نے کہا کہ زرمبادلہ کے موجودہ بحران کی وجہ سے بینکوں نے ایل سی کھولنے پر پابندیاں عائد کر دی ہیں۔ شپنگ کنٹینرز بندرگاہوں پر پھنس گئے ہیں جو مینوفیکچرنگ اور صنعتی شعبوں کی سپلائی چین کے لیے خطرات پیدا کر رہے ہیں۔ایل سی سی آئی کے صدر نے کہا کہ توانائی کا ایک بہت بڑا حصہ ابھی بھی مہنگے درآمدی ایندھن سے پیدا ہوتا ہے جس کے نتیجے میں ٹیرف میں زبردست اضافہ اور بھاری گردشی قرضہ جا چکا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے حکومت کو تمام بندرگاہوں کو فوری طور پر بانڈ قرار دینے کی سفارش کی ہے تاکہ تاجروں کو پورٹ اسٹوریج چارجز سے بچایا جا سکے۔ ہم نے حکومت اور دیگر اسٹیک ہولڈرز سے بھی درخواست کی ہے کہ وہ پاکستان میں کام کرنے والی شپنگ لائنز کے ساتھ مشغول ہوں اور انہیں ڈیمریج اور ڈیٹینشن چارجز معاف کرنے پر راضی کریں۔انہوں نے کہا کہ درآمدی بل کو کم کرنے کے لیے قابل تجدید ذرائع سے توانائی کی پیداوار میں اضافہ کرنا ہوگا۔ ڈیموں اور آبی ذخائر کی تعمیر کی ضرورت ہے۔ یہ ایک اہم شعبہ ہے جہاں برطانیہ کی حکومت پاکستان کو مدد فراہم کر سکتی ہے۔کاشف انور نے کہا کہ برطانوی کمپنیوں کے لیے پاکستانی کمپنیوں کے ساتھ مشترکہ منصوبے شروع کرنے اور صحت، تعلیم، گرین انرجی، انفراسٹرکچر، فارماسیوٹیکل، زراعت، آئی ٹی، کان کنی اور سیاحت کے شعبوں میں اقتصادی تعاون بڑھانے کے بہترین مواقع موجود ہیں۔ موسمیاتی تبدیلیوں کا مقابلہ کرنا ایک اہم شعبہ ہے جہاں دونوں ممالک کو تعاون بڑھانے کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہا کہ برطانیہ کو پاکستان کے فوڈ سیکٹر کی برآمدات میں اضافے کے بھی بڑے امکانات ہیں۔ اس مقصد کے لیے پاکستانی برآمد کنندگان کو برطانیہ کے معیارات پر پورا اترنے کے لیے بہتر رہنمائی کی ضرورت ہے تاکہ اس کی فوڈ مارکیٹ میں گہرائی تک رسائی حاصل کی جا سکے۔انہوں نے کہا کہ ایل سی سی آئی خاص طور پر خواتین کاروباریوں پر خصوصی توجہ کے ساتھ ایس ایم ایز کی ترقی پر توجہ دے رہا ہے۔ ہم یقینی طور پر مطلوبہ نتائج حاصل کرنے کے لیے برطانوی ہائی کمیشن کے ساتھ تعاون کرنا چاہیں گے۔

مزید :

کامرس -