کلمہ طیبہ والا پوسٹر نذر آتش کئے جانے کیخلاف مقبوضہ کشمیر میں ہڑتال

کلمہ طیبہ والا پوسٹر نذر آتش کئے جانے کیخلاف مقبوضہ کشمیر میں ہڑتال

سری نگر(کے پی آئی)کلمہ طیبہ والا پوسٹر نذر آتش کئے جانے کے خلاف مقبوضہ کشمیر میں ہڑتال سے کاروبار زندگی معطل ہو کر رہ گیا ۔ مقبوضہ کشمیر کے مختلف مقا مات پر جلسے جلوس اور مظاہرے ہوئے ۔ڈیمو کریٹک پولیٹکل مومنٹ کے سینئر رہنما شکیل احمد بٹ کو کئی پارٹی کارکنوں سمیت ما ئسمہ سرینگر میں اس وقت گر فتار کیا گیا جب انہوں نے پا رٹی کار کنوں کے ہمراہ جلوس نکالنے کی کوشش کی۔ ڈیمو کریٹک پولیٹکل مومنٹ ضلع سرینگر کے اہتمام سے جلوس نکالا گیا۔ جلوس میں ڈ سٹرکٹ سرینگر کے ضلع صدر محمد عمران کے علاوہ دیگر کارکناں بھی شامل تھے۔ جلوس میں شامل لوگ جونہی اسلام اور آ زادی کے فلک شگاف نعرے لگاتے ہو ئے لاچوک کی طرف بڑ ھنے لگے تو پولیس نے ان کا راستہ روکا جس دوران پولیس اور مظا ہرین کے درمیان زبردست مزاحمت ہو ئی تاہم بعد میں طاقت کے بل پر شکیل احمد بٹ کو نصف درجن ساتھیوں جن میں بشیر احمد، غلام احمد، محمد عارف ، محمد مظفر شاہ ، اور غلام احمد سمیت گر فتا ر کر لیا گیا ۔ راجوری میں کلمہ طیبہ والے جھنڈے کی توہین کے خلاف ٹریڈرز فیڈریشن کی طرف سے لال چوک میں احتجاجی جلوس نکالا گیا اور اس واقعہ پر غم و غصہ کا اظہارکیا گیا ۔کشمیر ٹریڈرز اینڈ مینوفیکچررز فیڈریشن کے اہتمام مسجد حمزہ امیرا کدل سے فیڈریشن کے صدر حاجی محمد یاسین خان کی قیادت میں تاجر برادری نے احتجاجی جلوس نکالا ۔جلوس میں شامل شرکاجموں کے مسلمانوں ہم تمہارے ساتھ ہیں ،فرقہ پرستی مردہ باد ،آر ایس ایس کا جو یار ہے ،غدار ہے ،توہین رسالت منظور نہیں ،جموں کے مظلوموں ،ہم تمہارے ساتھ ہیں کے نعرے لگا رہے تھے ۔جلوس جب لال چوک پہنچا تو انہوں نے یہاں کچھ دیر تک دھرنا دیا اور اسلام اور آزادی کے حق میں نعرے لگائے ۔اس موقعہ پر محمد یاسین خان نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ راجوری میں کلمہ طیبہ کی بے حرمتی کے واقعہ سے مسلمانوں کے جذبات مجروح ہیں اور اس طرح کا واقعہ کسی بھی صورت میں برداشت نہیں کیا جائے گا ۔انہوں نے کہا کہ انتہا پسند ہندو جماعتیں ایک منصوبہ بند سازشوں کے تحت یہاں کے مسلمانوں کے دل مجروع کررہے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ اگر یہ رویہ بند نہیں ہوا تو پھر اس کے ردعمل میں جو رویہ ہوگا ،جو سخت ہوگا ۔خان نے کہا کہ موجودہ حکومت کے فرقہ وارانہ تشدد اور مسلکی منافرت کے ماحول کوہوا دیکر اس متنازعہ خطے میں زورو زبردستی کے حربے کو ہوا دے رہی ہے ۔خان نے وزیر اعظم نریندر مودی سے مخاطب ہوکر کہا کہ ریاست کے ایک خطہ میں اگرچہ بی جے پی نے اکثریت حاصل کی تاہم اس کا یہ مطلب نہیں کہ وہ یہاں کی 70فی صد مسلمانوں کے جذبات کے ساتھ کھلواڑ کریں ۔انہوں نے کہا کہ جموں خطے میں مسلمانوں میں عدم تحفظ کے احساس کو پیدا کرنے کے پیچھے ایک گہری سازش ہے اور اس سازش کو ناکام بنایا جائے گا۔ آج تاجر انجمنوں کی طرف سے دی گئی کال کو کامیاب بنانے کی اپیل کرتے ہوئے خان نے کہا کہ کشمیری مسلمان اپنے جموں کے مسلمان بھائیوں کے شانہ بشانہ کھڑے ہیں۔ادھر کشمیر چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹریز اورکشمیر ٹریڈر اینڈ مینو فیکچر فیڈریشن نے سنیچر کو ہمہ گیر ہڑتال کی اپیل کی ہے۔

جبکہ دیگر سیاسی ،مذہبی ،تجارتی و سماجی انجمنوں نے اس کی حمایت کا اعلان کیا ہے ۔چیمبرآف کامرس اور کشمیر ٹریڈرز اینڈ مینو فیکچرفیڈریشن نے راجوری واقعے کو ناقابل برداشت قرار دیتے ہوئے اسکے خلاف سخت احتجاج کیا ۔چیمبرآف کامرس کے جوائنٹ سیکریٹری فیض احمد بخشی نے کہاکہ راجوری میں کلمہ طیبہ کی بے حرمتی سے امت مسلمہ کے دل مجروح ہوئے ہیں اور اس کے بعد انتظامیہ اور سرکاری مشنری نے جس طرح حالات بنائے اس سے لگتا ہے کہ ایک مخصوص طبقے کو یہ شر پسند کارروائیاں کرنے کی اجازت دی جاتی ہے اور اسکے بعد مسلم طبقہ سے وابستہ نوجوانوں پر یلغار کی جاتی ہے۔لبریشن فرنٹ چیئرمین محمدیاسین ملک نے کہا کہ کشمیری اپنے بھرپور احتجاج سے بھارت کے حکمرانوں اور انکیے حامیوں پر واضح کردیں گے کہ جموی مسلمانوں پر ڈھائے جانے والے مظالم پر کشمیری کسی بھی صورت میں چپ نہیں بیٹھیں گے۔ فریڈم پارٹی ،نیشنل پیپلز پارٹی کے چیئرمین سید سیلم گیلانی نے راجوری جموں میں ہند وں فرقہ پرستوں کی طرف سے مسلم دل آزار کارروائی کیخلاف کل جماعتی حریت کانفرنس اور وادی کی مختلف تجارتی انجمنوں کی طرف سے دی گئی ہڑتال کال کی بھر پور حمایت کا اعلان کیاہے۔ ادھر بار ایسوسی ایشن نے بھی راجوری سانحہ کی سخت الفاظ میں مذمت کی وکلا نے عدالتوں کے کام کاج کا بائیکاٹ کیا ۔

مزید : عالمی منظر