حالیہ بارشوں سے زیادہ تباہی علاقہ رزڑ میں ہوئی ہے

حالیہ بارشوں سے زیادہ تباہی علاقہ رزڑ میں ہوئی ہے

صوابی( بیوروپورٹ) اہلیان رزڑ ضلع صوابی نے صوبائی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ حالیہ بارشوں سے زیادہ تباہی علاقہ رزڑ میں ہوئی ہے جہاں پچاس فی صد تمباکو کو نقصان پہنچنے کے علاوہ تین افراد جاں بحق ہو گئے ہیں۔ حالیہ بارشوں اور ژالہ باری سے ضلع صوابی میں سات افراد جاں بحق جبکہ ضلع بھر کے پچاس فیصد کھڑی فصلوں کونقصان پہنچاہے۔ ڈاگئی، یار حسین، دوبیان، سردچینہ، یعقوبی اور سوڈھیر ہوچکا ہے،جس سے ایک سو بیس ارب روپے سے ذیادہ کی فصلیں تباہ ہوگئی۔ اس سلسلے میں علاقہ کے سیاسی رہنماؤں ، کاشتکاروں اور منتخب نمائندوں نے مطالبہ کیا کہ ضلع صوابی کی حالیہ بارشوں اور ژالہ باری کی وجہ سے ضلعے کو آفت زدہ قرار دیا جائے تاکہ ذمینداروں کی داد رسی ہوسکے انہوں نے کہا کہ تمباکو کو صوبائی فصل قرار دیا جائے اور ذمینداروں کو ٹوبیکو بورڈ کے ممبران بنایا جائے،انہوں نے پرچیز کمپنیوں پرزور دیا کہ رجیکشن کا عمل فوری بند کیا جائے اور سرپلس کا ڈرامہ ختم کیا جائے انہوں نے دھمکی دی کہ اگر فوری مسئلہ حل نہ ہوا تو صوبائی اسمبلی کے سامنے تمباکو اور اہنے آپ کو آگ لگا دینگے،کیونکہ یہ اتنی قیمتی فصل ہے جس پر ہم مرکز کو فی کلو تیرا سو روپے اور صوبائی حکومت کو کروڑوں کاٹیکس دیتے ہیں لیکن کاشتکاروں کا حالتزار دیکھنے کے قابل ہوتا ہے#

مزید : پشاورصفحہ آخر