نوجوانوں میں فکری تربیت میں اضافے کی ضرورت ہے،راشد نسیم

نوجوانوں میں فکری تربیت میں اضافے کی ضرورت ہے،راشد نسیم

کراچی (اسٹاف رپورٹر)اسلامی جمعیت طلبہ کراچی کے ز یر اہتمام کارکنان کی فکری و نظریاتی تربیت و تزکیہ کے لیے تین روزہ تربیتی و اصلاحی اجتماع گورنمنٹ کالج آف ٹیکنالوجی سائٹ کراچی میں جاری ہے۔تربیت گاہ میں شہر بھر کے تعلیمی اداروں اور حلقہ جات سے ہزاروں کی تعداد میں طلباء جوق درجوق شریک ہورہے ہیں۔تربیت گاہ کا آغاز درس قرآن سے ہوا۔جس کے مدرس شیخ الحدیث مولانا ضیاء الرحمن فاروقی نے سورۃالحجرات پر درس پیش کیا۔بعد ازاں عصری نشستوں کا انعقاد ہوا جس میں جامعات و کالجز کے کارکنان سے سوالات و جوابات کی نشست سے سابق ناظمین اعلیٰ وقاص انجم جعفری اور حافظ نعیم الرحمٰن نے گفتگو کی۔کارکنان نے جمعیت کی تعلیمی اداروں میں کام کے حوالے سے سوالات کئے اور دعوت کے نئے طریقوں کو اپنانے پر تبادلہء خیال ہوا۔نیز حلقہ جات کے کارکنان کے لئے عصری نشست سے سابق ناظم اعلیٰ راشد نسیم اور حافظ فصیح اللہ حسینی نے طلباء سے رہائشی علاقوں میں دعوتی و تربیتی کام کی حکمتِ عملی کے حوالے سے تبادلہء خیال کیا۔اس موقع پر نائب امیر جماعت اسلامی پاکستان راشد نسیم نے کہا کہ جمعیت کے نوجوانوں کو اپنی علمی اور فکری تربیت میں اضافے کی ضرورت ہے اور دینی میدان کے ساتھ ساتھ علمی میدان میں بھی اپنا کردار ادا کرنا ہے اور معاشرے میں ایک رول ماڈل بننا ہے۔دوسرے دن کا آغاز تلاوت قرآن مجید سے ہوا۔قرآن کی چار بنیادی اصطلاحات کے موضوع پرسید محمد اقبال نے لیکچر دیتے ہوئے کہا کہ آج ہمیں الہ، رب، عبادت اور دین کی اصطلاحات کو بغور سمجھنے کی ضرورت ہے کیوں کہ اسی پر ہماری کامیابی و ناکامی کا انحصارہے۔ مصعب بن عمیرؓ کی سیرت پر روشنی ڈالتے ہوئے معروف اسکالرفاروق نعمت اللہ نے کہا کہ جمعیت کے نوجوانوں کو معاشرے میں اگر حقیقی داعی بننا ہے تو وہ مصعب بن عمیرؓ کے اسوہِ حسنہ کو تھام لیں اور اپنا اوڑھنا بچھونا بنالیں۔تیسرے سیشن میں سابق ناظم اعلیٰ اسلامی جمعیت طلبہ پاکستان و امیر جماعت اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمٰن نے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ موجودہ حالات میں امت مسلمہ کا نوجوان مایوسی اور اداسی کا شکار ہے۔ مسلمان ہونے کا اولین تقاضہ ہے کہ برے سے برے حالات میں حق کا ساتھ دیا جائے اور گھبرایا نہ جائے۔ مسلم نوجوان دور جدید کا وہ خوش قسمت انسان ہے جو اسلام کے حیات بخش پیغام کی بددلت آج بھی ہر طرح کی ذہنی و فکری انتشار سے محفوظ ہے ۔علاوہ ازیں تین روزہ تربیت گاہ کے پہلے اور دوسرے روز کارکنان کی توجہ دیدنی رہی،وہ پورے انہماک کے ساتھ پروگرامات سنتے رہے۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر