خواجہ آصف کے پاس ایک نہیں 3 اقامے ہیں، مقامی روزنامے کا انکشاف

خواجہ آصف کے پاس ایک نہیں 3 اقامے ہیں، مقامی روزنامے کا انکشاف
خواجہ آصف کے پاس ایک نہیں 3 اقامے ہیں، مقامی روزنامے کا انکشاف

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

سیالکوٹ / اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آ ن لائن) وفاقی وزیر دفاع خواجہ آصف کا متحدہ عرب امارات کا اقامہ منظر عام پر آچکا ہے لیکن اب انکشاف ہوا ہے کہ ان کے پاس صرف ایک نہیں بلکہ تین تین اقامے ہیں۔

انگریزی روزنامے ایکسپریس ٹربیون کے مطابق خواجہ آصف کا جو اقامہ سوشل میڈیا پر منظر عام پر آیا ہے اس کا انہوں نے 2013 کے عام انتخابات کیلئے کاغذات نامزدگی جمع کراتے ہوئے تذکرہ بھی کیا تھا۔ یہ اقامہ یو اے ای کی انٹرنیشنل مکینیکل کمپنی کی طرف سے جاری کیا گیا تھا جس نے ان کی بطور قانونی مشیر 6 ماہ کیلئے خدمات حاصل کی تھیں۔ مجموعی طور پر خواجہ آصف تین اقاموں کے مالک ہیں۔پہلا اقامہ 2007 سے 2010 ، دوسرا 2010 سے 2011 اور تیسرا اقامہ 2011 کے بعد 6 ماہ کا ہے۔

خواجہ آصف کا کہنا ہے کہ ان کے اقاموں کے بارے میں الیکشن کمیشن آف پاکستان اور فیڈرل بورڈ آف ریونیو بھی بخوبی آگاہ ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ ان کا 1984 سے ابو ظہبی میں ایک بینک اکاؤنٹ ہے جس کے ذریعے وہ اپنی تنخواہیں و دیگر رقوم موصول کرتے ہیں۔

واضح رہے کہ پی ٹی آئی رہنما اور این اے 110 سے خواجہ آصف کے حریف امیدوار عثمان ڈار نے مطالبہ کیا ہے کہ خواجہ آصف یو اے ای میں ایک کمپنی میں ملازمت کرتے رہے ہیں لیکن انہوں نے اپنی اس آمدنی کی بابت الیکشن کمیشن کو آگاہ نہیں کیا جس کی بنا پر انہیں آئین کے آرٹیکل 62 اور 63 کے تحت نا اہل قرار دیا جائے۔ انہوں نے یہ الزام بھی عائد کیا ہے کہ خواجہ آصف نے اس کمپنی کو پاکستان میں مختلف پراجیکٹس میں شامل کروا کے فائدہ پہنچایا۔

مزید : قومی