ہسپتالوں میں زکٰوۃ کے فنڈز بھی ختم ، غریبوں کو مفت ادویات کی سہولت بند

ہسپتالوں میں زکٰوۃ کے فنڈز بھی ختم ، غریبوں کو مفت ادویات کی سہولت بند

لاہور(جاوید اقبال) صوبائی دارالحکومت کے ہسپتالوں میں زکوٰۃ کے فنڈز بھی ختم ہو گئے ہیں جس سے نادار اور مفلس مریضوں کو زکوٰۃ سے مفت ادویات ملنا بھی بند ہو گئی ہیں۔ اس کا سب بے بڑا نقصان ہیٹا ٹائٹس ، کینسر اورگردے کے مریضوں کو ہو رہا ہے جو ماہانہ زکوٰۃ سے مفت ادویات لیتے تھے مگر فنڈز ختم ہونے سے مفت ادویات کا سلسلہ بند ہوجانے سے ان کی زندگیاں خطرات سے دوچار ہو گئی ہیں۔ واضح رہے کہ مذکورہ مریضوں کو ہسپتالوں سے ایل پی میں مفت ادویات کی فراہمی کا سلسلہ پہلے ہی محکمہ صحت بند کرچکا ہے ۔ دوسری طرف زکوٰۃ سے ادویات کی فراہمی کے لئے ہسپتالوں کے زکوٰۃ اینڈ سوشل ویلفیئر شعبہ جات کی طرف سے کمپنیوں سے کئے گئے کنٹریکٹ 30 جون سے ختم ہو چکے ہیں جن میں نہ تجدید کی گئی نہ ہی دوبارہ کنٹریکٹ کیا گیا۔ اس صورتحال سے غریب اور زکوٰۃ سے ادویات لینے والے مریض ادویات کے حصول کے لئے ایڑیاں رگڑ رہے ہیں۔ اس حوالے سے محکمہ صحت کے ترجمان کا کہنا ہے کہ 2018-19 کے لئے جلدزکوٰۃ کے فنڈز ہسپتالوں کو جاری کردئیے جائیں گے۔ الیکشن کمیشن آف پاکستان نے انتخابات کی وجہ سے ہسپتالوں کو زکوٰۃ کے فنڈزجاری کرنے سے روک رہا تھا۔ اب انتخابات کے فوری بعد فنڈز جاری کردئیے جائیں گے۔ بتایا گیا ہے کہ محکمہ زکوٰۃ اور بیت المال نے ہسپتالوں کو زکوٰۃ کے فنڈز یکم جولائی تک جاری کرنے تھے مگر جاری نہیں کئے گئے جبکہ ہسپتالوں میں 2017-18 کے فنڈز مکمل طورپر ختم ہو گئے ۔ ہر ہسپتال میں زکوٰۃ اور سوشل ویلفیئر کا شعبہ موجود ہے جہاں سے زکوٰۃ کے مستحقین کو مفت ادویات ، مفت آپریشن کا سامنا فراہم کیا جاتا ہے۔ بتایا گیا ہے کہ جس پر ادویات مفت فراہم کی جاتی ہیں مگر فنڈز نہ ہونے سے یہ سلسلہ بند ہو گیا ہے ۔ روزانہ زکوٰۃ سے ادویات حاصل کرنے کی خواہش لے کر سینکڑوں مریض ہسپتالوں میں آنے میں خصوصاً گردوں کے فیلرز کیسنر اور یرقان کے مریض جن کی ادویات بہت مہنگی ہیں اور زکوٰۃ سے حاصل کرتے ہیں مگر فنڈز نہ ہونے سے یہ سلسلہ بند ہو چکا ہے۔ اس حوالے سے محکمہ زکوٰۃ کے ترجمان کا کہنا ہے کہ انتخابات کے باعث فنڈز جاری نہیں کئے گئے۔ اب اس ماہ کے آخر یا اگست کے شروع میں ہر ہسپتال کو فنڈز جاری کردئیے جائیں گے تاہم دوبارہ کنٹریکٹ جن ہسپتالوں میں نہیں ہوئے اس کا بھی نوٹس لیا جائے گا۔ جولائی میں ان کے خلاف ایکشن لیا جائے گا۔

مزید : میٹروپولیٹن 1


loading...