تحریک انصاف پہلے، مسلم لیگ(ن)دوسرے، پیپلزپارٹی تیسرے نمبر پر،پنجاب اور کے پی کے اسمبلی میں بھی پی ٹی آئی کو بر تری سندھ میں پی پی کو سبقت

تحریک انصاف پہلے، مسلم لیگ(ن)دوسرے، پیپلزپارٹی تیسرے نمبر پر،پنجاب اور کے پی ...

لاہور،فیصل آباد،اسلام آ باد،کراچی ، کوئٹہ پشاور( ما نیٹر نگ ڈیسک،نما نئدگان، نیو ز ایجنسیاں)ملک بھر میں عام انتخابات کے نتائج کی آمد کا سلسلہ جاری ہے اور غیرسرکاری غیر حتمی نتائج کے مطابق تحریک انصاف کو 98 اور مسلم لیگ (ن) کو 58 پر برتری حاصل ہے۔ پولنگ کا عمل مکمل ہونے کے بعد انتخابی نتائج موصول ہورہے ہیں، اور غیر حتمی و غیر سرکاری نتائج کے مطابق قومی اسمبلی کی 74 نشستو ں پر تحریک انصاف کو برتری حاصل ہے جب کہ (ن) لیگ کو 54 اور پیپلز پارٹی کو 29 نشستوں پر اب تک کی اطلاعات کے مطابق سبقت حاصل ہے۔قومی اسمبلی کی نشستوں پر اب تک کی اطلاعات کے مطابق 25 نشستوں پر آزاد امیدواروں اور 10 نشستوں پر متحدہ مجلس عمل کوبرتری حاصل ہے۔اسی طرح متحدہ قومی موومنٹ پاکستان کو 5، جی ڈی اے 8، بی این پی 5، مسلم لیگ (ق) کو 3 اور عوامی نیشنل پارٹی کو 2 نشستوں پر برتری حاصل ہے۔آخری اطلاعات کے مطابق تحریک انصاف کو پنجاب اسمبلی کی 59، مسلم لیگ (ن) کو 45 اور 16 نشستوں پر آزاد امیدواروں کو برتری حاصل ہے جب کہ پیپلز پارٹی کو 2 اور متحدہ مجلس عمل کو ایک نشست پر برتری حاصل ہے۔پیپلز پارٹی کوسندھ اسمبلی کیلئے 35، گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس (جی ڈی اے) کو 10، تحریک انصاف کو 9 اور ایم کیو ایم کو ایک نشست پر برتری حاصل ہے۔تحریک انصاف کوخیبرپختونخوا اسمبلی کیلئے 17، عوامی نیشنل پارٹی 4، متحدہ مجلس عمل کو 3، مسلم لیگ (ن) کو تین اور 3 آزاد امیدواروں کو صوبائی اسمبلی کی نشستوں پر برتری حاصل ہے۔ بلوچستان عوامی پارٹی کوبلوچستان اسمبلی کیلئے 5 نشستوں کے ساتھ برتری حاصل ہے جب کہ متحدہ مجلس عمل کو 4 اور تحریک انصاف کو بھی 4 نشستوں پر برتری حاصل ہے۔این اے 35 بنوں کے 433 پولنگ اسٹیشنز میں سے 31 کے غیر سرکاری نتائج کے مطابق متحدہ مجلس عمل کے اکرم خان درانی 8661 ووٹ لیکر آگے اور چیئرمین تحریک انصاف عمران خان 5870 ووٹوں کے ساتھ پیچھے ہیں۔این اے 131 لاہور کے 242 پولنگ اسٹیشنز میں سے ایک کے غیرسرکاری نتائج کے مطابق مسلم لیگ (ن) کے خواجہ سعد رفیق 276 ووٹوں کے ساتھ آگے ہیں جب کہ چیئرمین تحریک انصاف عمران خان 72 ووٹوں کے ساتھ پیچھے ہیں۔ این اے 62 راولپنڈی کے 353 حلقوں میں سے ایک کے غیرسرکاری نتائج کے مطابق عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید 326 ووٹوں کے ساتھ آگے اور مسلم لیگ (ن) کے دانیال چوہدری 258 ووٹوں کے ساتھ پیچھے ہیں۔این اے 200 لاڑکانہ کے 336 میں سے ایک حلقے کے نتائج کے مطابق چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری 420 ووٹوں کے ساتھ آگے اور متحدہ مجلس عمل کے راشد محمود سومرو 128 ووٹوں کے ساتھ پیچھے ہیں۔این اے 124 لاہور 2 کے 415 پولنگ اسٹیشنز میں سے 30 کے غیر سرکاری نتائج کے مطابق مسلم لیگ (ن) کے حمزہ شہباز شریف 9545 ووٹ لے کر آگے اور تحریک انصاف کے نعمان قیصر 5221 ووٹ لے کر دوسرے نمبر پر ہیں۔این اے 35 بنوں کے 433 پولنگ اسٹیشنز میں سے 3 کے غیرسرکاری نتائج کے مطابق چیئرمین تحریک انصاف عمران خان 262 ووٹوں کے ساتھ ا?گے اور متحدہ مجلس عمل کے امیدوار اکرم درانی 262 ووٹوں کے ساتھ پیچھے ہیں۔غیر حتمی اور غیر سرکاری نتیجے کے مطابق این اے 220 عمر کوٹ 410 میں سے ایک پولنگ اسٹیشن کے نتائج کے مطابق تحریک انصاف کے شاہ محمود قریشی 123 ووٹ لیکر آگے اور پیپلز پارٹی کے نواب یوسف تالپور 59 ووٹ لے کردوسرے نمبر پر ہیں۔الیکشن کمشنر بلوچستان نیاز بلوچ کا کہنا ہے کہ صوبے میں پولنگ کی مجموعی صورتحال بہتر رہی اور ووٹنگ ٹرن آؤٹ کی شرح 50 فیصد سے زائد ہونے کا امکان ہے۔صوبائی الیکشن کمشنر کا کہنا ہے کہ 2008 اور 2013 کے مقابلے میں 2018 کے انتخابات تاریخی رہے، لوگوں نے انتخابات میں بھرپور دلچسپی لی جب کہ کچھ شکایات بھی موصول ہوئی ہیں۔این اے 208 خیرپور ون کے 295 پولنگ اسٹیشنز میں سے ایک کا غیرسرکاری نتیجہ سامنے آگیا جس کے مطابق پیپلز پارٹی کی نفیسہ شاہ 438 ووٹ کے ساتھ آگے اور گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس کے غوث علی شاہ 67 ووٹ کے ساتھ دوسرے نمبر پر ہیں۔این اے 206 سکھر ون کے 257 میں سے 2 پولنگ اسٹیشنز کے غیرسرکاری اور غیر حتمی نتائج کے مطابق پیپلز پارٹی کے خورشید شاہ 627 ووٹ کے ساتھ آگے اور تحریک انصاف کے طاہر حسین شاہ 40 ووٹ کے ساتھ دوسرے نمبر پر ہیں

الیکشن نتائج

۔فیصل آباد(نامہ نگار خصوصی)فیصل آباد سے قومی اسمبلی کے 9حلقو ں میں انتخابات ہوئے جن میں سے ایک حلقہ 101میں آزاد امیدوار چوہدری عاصم نذیر اور سمندری سے حلقہ این اے 104سے ن لیگ کے چوہدری شہباز بابر کے سوا باقی 7حلقوں میں غیر حتمی اور آخری اطلاعات کے مطابق پی ٹی آئی جیت رہی تھی جس کے مطابق حلقہ 101 میں آزاد امیدوار چوہدری عاصم نذیر کا مقابلہ پی ٹی آئی کے امیدوار ظفر ذوالقرنین ساہی کے ساتھ تھا اس میں عاصم نذیر جیت رہے تھے. این اے 102میں پی ٹی آئی کے نواب شیر وسیر ن لیگ کے طلال چوہدری کے مقابلہ میں واضح اکثریت سے جیت رہے تھے حلقہ این اے 104سے ن لیگ کے امیدوار چوہدری شہبا ز بابر جیت رہے تھے جبکہ ان کے مدمقابل سردار دلدار احمد چیمہ پی ٹی آئی کے امیدوار دوسرے نمبر پر تھے. این اے 105میں ن لیگ کے میاں فاروق تیسرے نمبر پر تھے. جبکہ آزاد امیدوار مسعود نذیر اور پی ٹی آئی کے رضا نصراللہ گھمن کے درمیان ٹف مقابلہ چل رہا تھا جہاں ڈاکٹر نثار جٹ آگے تھے این اے 106 سے پی ٹی آئی کے ڈاکٹر نثار جٹ اور ن لیگ کے رانا ثناء اللہ کے درمیان ٹف مقابلہ چل رہاتھا. این اے 107سے پی ٹی آئی کے امیدوار شیخ خرم شہزاد اپنے مدمقابل حاجی محمد اکرم انصاری کے مقابلے میں بہتر پوزیشن پر جا رہے تھے. این اے 108میں پی ٹی آئی امیدوار میاں فرخ حبیب تھوڑے سے فرق کے ساتھ اپنے مدمقابل عابد شیر علی سے جیت رہے تھے حلقہ این اے 109سے پی ٹی آئی کے امیدوار فیض اللہ کموکا واضح اکثریت کے ساتھ اپنے مدمقابل ن لیگ کے میاں عبدالمنان سے جیت رہے تھے. حلقہ این اے 110سے پی ٹی آئی کے امیدوار راجہ ریاض احمد خاں ن لیگ کے امیدوار رانا محمد افضل خاں سے جیت رہے تھے.

فیصل آباد

مزید : کراچی صفحہ اول


loading...