صوابی، اے این پی اور تحریک انصاف کے کارکنوں میں فائرنگ، نو جوان جاں بحق ، 3شدید زخمی

صوابی، اے این پی اور تحریک انصاف کے کارکنوں میں فائرنگ، نو جوان جاں بحق ، ...

صوابی (بیورورپورٹ)قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 19صوابی2میں واقع صوبائی اسمبلی کے حلقہ 47صوابی5کے کرنل شیر کلے نواں کلی کے گورنمنٹ پرائمری سکول جمال آباد بنگزارہ پولنگ اسٹیشن کے قریب امیدواروں کے کیمپوں پر پی ٹی آئی اور اے این پی کے کارکنوں کے مابین فائرنگ کے تبادلے کے دوران پی ٹی آئی کے دیرینہ رہنما مختیار جان کاکا کا جواں سال صاحبزادہ انجینئر شاہ زیب جاں بحق جب کہ مختیار جان کاکا سمیت پی ٹی آئی کے تین کارکن شدید زخمی اور اے این پی کا ایک کارکن بھی زخمی ہو گیا۔ پولیس تھانہ کالو خان کی رپورٹ کے مطابق الیکشن کیمپ میں اے این پی اور پی ٹی آئی کے کارکنوں کے مابین تکرار ہوئی اس دوران اے این پی کے کارکنوں کی جانب سے فائرنگ کے نتیجے میں پی ٹی آئی کا سر گرم کارکن انجینئر شاہ زیب ولد مختیار جان کاکا موقع پر جاں بحق جب کہ فائرنگ سے مختیار جان کاکا ،محمد سلیم اور شہزاد شدید زخمی ہو گئے جب کہ غیر مصدقہ اطلاعات کے مطابق فائرنگ سے اے این پی کا ایک کارکن عدنان بھی زخمی ہوا ہے تاہم اس کی رپورٹ تھانہ کالو خان میں درج نہیں ہے ۔ کالو خان پولیس نے مجروح مختیار جان کاکا کی رپورٹ پر اے این پی کے ضلعی صدر و پی کے 47صوابی5 سے امیدوار حاجی امیر الرحمن اور جان محمد عرف جانے کے خلاف ایف آئی آر درج کر کے تفتیش شروع کر دی ہے وقوعہ کے بعد پولنگ کا عمل جاری رہا اس حلقے سے پی ٹی آئی کے مرکزی وائس چیر مین اور سابق صوبائی سینئروزیر برائے صحت شہرام خان ترکئی ، اے این پی کے ضلعی صدر حاجی امیر الرحمن اور مسلم لیگ ن کے اعجاز اکرم باچا کے مابین مقابلہ تھا ۔ مقتول شاہ زیب کو بدھ کی شام اپنے آبائی قبرستان نواں کلی میں سپرد خاک کر دیا گیا۔ وہ حال ہی میں انجینئرنگ یونیورسٹی پشاور میں انجینئرنگ کی تعلیم مکمل کرنے کے بعد سی ایس ایس کے امتحانات کے لئے تیاریاں کر رہے تھے ۔ مقتول پی ٹی آئی کے ایک سر گرم کارکن تھے جب کہ ان کے مجروح والد مختیار جان کاکا ترکئی خاندان کی عوامی جمہوری اتحاد کے بانی رہنما تھے۔

مزید : کراچی صفحہ اول


loading...