پاک بھارت زمینی، فضائی رابطوں،تجارت کی بندش سے عوام پریشان

  پاک بھارت زمینی، فضائی رابطوں،تجارت کی بندش سے عوام پریشان

  

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک)پاکستان اور بھارت کے درمیان لگ بھگ ایک سال مسافر ٹرینوں، بسوں اور جہازوں کی بندش سمیت تجارت و رابطے ختم ہونے سے دونوں ہمسایہ ممالک کے عوام پریشان ہیں۔پاکستان اور بھارت کے درمیان ریل رابطوں کے سلسلے میں سمجھوتہ ایکسپریس، تھل ایکسپریس اور مال گاڑی رواں دواں تھی۔سمجھوتہ ایکسپریس ہفتے میں 2 بار پیر اور جمعرات کو جبکہ تھل ایکسپریس ہفتے میں ایک روز جمعے کو چلتی تھی لیکن پاک بھارت تعلقات کشیدہ ہوئے توگزشتہ سال 8 اگست کو ریل رابطے منقطع ہوگئے جو تاحال منقطع ہیں اور بھارتی ٹرین سمجھوتہ ایکسپریس اور مال گاڑی بھی پاکستان میں موجود ہے۔پاک بھارت کے درمیان روڈ رابطوں کیلئے دوستی بس روزانہ لاہور سے دہلی جاتی تھی جبکہ امرتسر بس ہفتے میں 4 روز چلتی تھی۔پاکستان ٹورازم ڈیولپمنٹ کارپوریشن (پی ٹی ڈی سی) نے دوستی بسوں کے ڈرائیورز سمیت دیگر عملے کو ملازمت سے فارغ کر دیا ہے جس کے باعث یہ افراد بھی مشکلات کا شکار ہیں۔اس کے علاوہ لاہور سے دہلی جانیوالی پرواز کا سلسلہ بھی رکاہوا ہے اور ہوائی رابطے بھی بند ہیں۔خیال رہے پاک بھارت ریل روڈ رابطے قبل ازیں 1992ِء 2001ء اور 2019ء میں بھی ٹوٹتے اور جڑتے رہے ہیں۔پاک بھارت ریل روڈ اور ائیر رابطوں کا انحصار دونوں ہمسایہ ممالک کے تعلقات پر منحصر ہوتا ہے، تعلقات اچھے ہوں تو پہیہ چلتا رہتا ہے ورنہ سب کچھ بند ہوجاتا ہے۔

پاک بھارت عوام

مزید :

پشاورصفحہ آخر -