زمین کے دفاع کیلئے ایٹم بم کا استعمال

زمین کے دفاع کیلئے ایٹم بم کا استعمال
زمین کے دفاع کیلئے ایٹم بم کا استعمال

  


واشنگٹن (نیوز ڈیسک) دنیا بھر میں اپنے اسلحے کی شیخیاں بگھارنے والے امریکا نے اب اپنے ایٹم بم خلاءمیں چلانے کا منصوبہ بھی بنا لیا ہے اور اس مشن کی وجہ زمین کی حفاظت بتائی گئی ہے۔ 

مزیدپڑھیں:نظام شمسی کے تین سیارے ایک ہی قطار میں آ گئے

سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ 2013 روس کی فضاءمیں ایک 60 فٹ چوڑا شہابیہ پھٹا اور اس کی وجہ سے 1500 لوگ زخمی ہوئے جبکہ 7000 سے زائد عمارتوں کو نقصان پہنچا۔ اگرچہ اس واقعے میں شہابیہ زمین تک پہنچنے سے پہلے ہی پھٹ گیا لیکن اگر کوئی بڑی چٹان خلاءسے زمین کی طرف ٹکرانے کے لئے بڑھی تو اس کا حل کیا ہو گا، اسی سوال پر غور و فکر کے بعد امریکی خلائی ادارے نے فیصلہ کیا ہے کہ اسے ایٹم بم سے تباہ کر دیا جائے گا۔

اخبار نیو یارک ٹائمز کے مطابق ناسا نے نیشنل نیوکلئیر سکیورٹی ایڈمنسٹریشن کے ادارے سے ایک معاہدہ کیا ہے جس کے تحت بوقت ضرورت ایٹمی ہتھیاروں کو زمین کے تحفظ کے لئے استعمال کیا جا سکے گا۔ دونوں اداراے آزادانہ طور پر اس بات پر تحقیق کرتے رہے تھے کہ زمین کی طرف بڑھنے والے دمدار ستاروں، شہابیوں یا سیارچوں کا رخ کیسے بدلا جا سکتا ہے۔ نئے معاہدے کے تحت ایٹمی سائنسدان اور راکٹ ٹیکنالوجی کے ماہرین اپنی مہارت اور علم کو اکٹھا کر سکیں گے تا کہ زمین کی طرف آنے والے خلائی اجسام کو تباہ کیا جا سکے یا ان کا رخ بدلا جا سکے۔

سائنسدانوں کا یہ بھی کہنا ہے کہ کسی بڑی چٹان کو خلاءمیں تباہ کرنے پر اس کے بے شمار چھوٹے ٹکڑے زمین پر تباہی مچا سکتے ہیں لہٰذا لیزر یا شمسی توانائی کے زریعے خلائی اجسام کا رخ بدلنے کی ٹیکنالوجی پر غور کرنا چاہئیے، البتہ ناسا کا اصرار ہے کہ ایٹمی ہتھیاروں کا استعمال ہی بہترین حل ہے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس