ڈی ایس پی میاں محمد ریاض نے قرآن کا نسخہ قلم سے لکھنے کا سلسلہ 1990میں شروع کیا

ڈی ایس پی میاں محمد ریاض نے قرآن کا نسخہ قلم سے لکھنے کا سلسلہ 1990میں شروع کیا

  

تحریر: مرزا نعیم الرحمان

مسلمانوں کی قران پاک سے والہانہ حد تک عقیدت کسی سے ڈھکی چھپی نہیں اور نہ ہی اسکا کوئی اندازہ لگایا جا سکتا ہے دنیا بھر میں قران پاک کو خوبصورت انداز سے لکھنے والوں کی بھی کوئی کمی نہیں جبکہ اس سلسلہ میں پنجاب پولیس کے ایک ڈی ایس پی میاں محمد ریاض نے خوبصورت خطاطی کرتے ہوئے قران پاک کا نسخہ قلم سے لکھنے کا سلسلہ 1990میں شروع کیا اور اب تک وہ کئی سپارے انتہائی خوبصورت خطاطی کیساتھ لکھ کر پنجاب پولیس کے ایسے پہلے پولیس آفیسر کا اعزاز حاصل کرنے میں کامیاب ہو گئے جنہوں نے خطاطی کے ذریعے قر ان پاک لکھنے کا سلسلہ شروع کر رکھا ہے جو اب تقریبا مکمل ہونے والا ہے میاں محمد ریاض گجرات کے نواحی گاؤں لدھا سدھا کے رہائشی غلام حسین کے فرزند ہیں اور انہوں نے ٹاٹ کے سکول میں بیٹھ کر اپنی ابتدائی تعلیم حاصل کی تختی پر قلم کیساتھ لکھا کرتے تھے اور انکا یہ شوق پروان چڑھتا رہا 1990میں انہوں نے یہ فیصلہ کیا کہ وہ قلم کے ساتھ خوبصورت خطاطی کرتے ہوئے قران پاک لکھیں گے اور یہ سلسلہ اب تقریبا مکمل ہونے والا ہے انہوں نے قر ان پاک کی مختلف آیات کو انتہائی خوبصورت اندازسے لکھا ہے انکی خطاطی کے چرچے پوری دنیا بالخصوص پاکستان میں عام ہیں ایک ملاقات میں انہوں نے کہا کہ قلم کے ساتھ لکھے گئے اس قران پاک کو قران اکیڈمی سعودیہ میں رکھنے کے خواہشمند ہیں جبکہ انکی یہ بھی خواہش ہے کہ انکی خطاطی کوغلاف کعبہ پر بھی کنندہ کیا جائے اور انکے لیے یہ سب سے بڑا اعزاز ہوگا اس سے نہ صرف گجرات کا نام روشن ہوگا بلکہ پنجاب پولیس کی تاریخ میں یہ پہلا واقعہ ہوگا کہ اسکے کسی آفیسر نے قلم کے ساتھ قران پاک خوبصورت انداز سے لکھا ایک سوال کے جوا ب میں انہوں نے کہا کہ وہ اپنی خطاطی کی نمائش بھی کرنے کے خواہشمند ہیں۔

مزید :

ایڈیشن 1 -