یوسی کوٹھا کلاں کے آج بلدیاتی الیکشن،ن لیگ،پی ٹی آئی امیدواروں میں مقابلہ

یوسی کوٹھا کلاں کے آج بلدیاتی الیکشن،ن لیگ،پی ٹی آئی امیدواروں میں مقابلہ

  

راولپنڈی(چوہدری نثا رسے) یونین کونسل 80 کوٹھہ کلاں میں بلدیاتی الیکشن آج ہو ں گے الیکشن کمیشن نے تمام انتظامات مکمل کر لیئے،پولنگ صبح8بجے سے شام 5بجے تک ہو گی الیکشن میں مسلم لیگ(ن) کے دوگروپ حصہ لے رہے ہیں،ملک جہانگیر گروپ کی انتخابی مہم پس پردہ سنیٹر چوہدری تنویر چلا رہے ہیں جبکہ چوہدری جاوید اختر اپنی انتخابی مہم اپنی مدد آپ کے تحت چلا رہے ہیں ،پاکستان تحریک انصاف کے امیدوار مسعود بھٹی جو چند روز قبل پی ٹی آئی میں شامل ہوئے ہیں اُن کی انتخابی مہم سابق امیدوار پی ٹی آئی پی پی6واثق قیوم عباسی پی ٹی آئی کے سر کردہ راہنما چلا رہے ہیں یونین کونسل میںآج 13795 رائے دہندگان حق رائے دہی استعمال کریں گے الیکشن کمیشن نے یونین کونسل کی6پولنگ اسٹیشن قائم کردیئے ہر وارڈ میں ایک ایک پولنگ اسٹیشن میں مرد اور خواتین کے الگ الگ بوتھ ہوں گے ۔پولنگ اسٹیشن ایک رائزنگ سکول ،پولنگ اسٹیشن نمبر2 گورنمنٹ ایلمنٹری سکول کار چوک،پولنگ اسٹیشن نمبر3 علی ٹرسٹ سکول ڈی بلاک ،پولنگ اسٹیشن نمبر4 برائٹ وے سکول ،پولنگ اسٹیشن نمبر5 ٹی سی ایف سکول،پولنگ اسٹیشن نمبر 6 گلریز میں ہوگا۔ جبکہ کار چوک کے مشرق جانب وارڈز جو کہ ڈھوک چوہدریاں و دیگر بلاک شامل ہیں کل ووٹوں کا نصف ہیں پولنگ ووٹ کے لئے رش بھی اس طرف ہوگاجب کہ ان تمام پولنگ اسٹیشنوں میں علی ٹرسٹ سکول کا پولنگ اسٹیشن نیم حساس بتایا جا رہا ہے جہاں پر حالات کشیدگی اختیار کرسکتے ہیں جس کی وجہ مسلم لیگ کے دونوں امیدوار کی حمائیتوں کی نظریں بھی اس پولنگ اسٹیشن پرلگی ہوئی ہیں۔ اس سال ہونے والے کوٹھہ کلاں یونین کونسل نے الیکشن کمیشن نے دو یونین کونسل میں تقسیم کر دیا ہے۔چوہدری جاوید اختر علاقہ کے معروف سیاسی و سماجی شخصیت چوہدری لال کے سپوت ہیں اور یہاں سے متعد د مرتبہ انتخابات میں بھاری اکثریت سے کامیاب ہو چکے ہیں جب کہ مد مقابل ملک جہانگیر اپنے بھائیوں چوہدری تنویر ، ملک غلام رضا ،بھتیجے ملک یاسر کی پس پردہ انتخابی مہمات کو بڑے احسن انداز سے چلانے کا وسیع تجربہ رکتھے ہیں جب کہ خود سیاسی میدان میں امیدوار کے طور پر پہلے مرتبہ میدان میں اترے ہیں ان کی انتخابی مہم بھی ملک غلام رضا ،ان کے بھائی صوبہ پوٹھوہار مہم کے بانی ملک ممریز حیدر ،چیئر مین اڈیالہ یونین کونسل چوہدری عمران سمیت گلریز ہاوسنگ سوسائٹی کے موجودہ اور سابق تمام عہدیداران چلا رہے ہیں اقلیتی حلقوں سے بھی ان کو بھرپور سپورٹ حاصل ہے یونین کونسل میں اقلیتی رائے دہندگان کے11 سوسے بارہ سو کے قریب ووٹ ہیں اور ان کے ووٹوں کی شرح پول بھی70 سے80فیصد ہوتی ہے جو کہ ان کی کامیابی میں واضح اکثریت کا ظاہر کرتی ہے اس کے علاوہ ملک جہانگیرخان کو گلریز ہاوسنگ سوسائٹی جو کہ ماضی میں ہمیشہ پولنگ ووٹ کے شرح 15 سے20 فیصد دیتا تھا امسال انتخابات میں گلریز میں انتخابی مہم سے ظاہر ہوا ہے کہ ووٹر سابق رویات کو توڑ کر بھرپور انتخابی مہم سے لطف انداز ہی نہیں ہوتے رہے اپنے ووٹ بھی پول کریں گے اور گلریز میں ملک جہانگیر خان کی انتخابی مہم مدمقابل امیدارواں سے زیادہ فحال اور مضبوط انداز میں نظر آئی جب کہ یونین کونسل 80 میں پی ٹی آئی کے امیدوار مسعود بھٹی کی انتخابی مہم بھی واثق قیوم عباسی، عامر کیا نی ،راجہ اجمل چلاتے رہے لیکن سابق بلدیاتی الیکشن گو پی ٹی آئی شکست کھا چکی تھی لیکن ورکروں نے مد مقابل امیدارواں کو کڑا وقت دیا تھا اس دفعہ پی ٹی آئی کے ورکروں میں وہ جوش خروش نظر نہیں آیا جو کہ مسعود بھٹی کے لئے زیادہ حوصلہ افزا نہیں عام انتخابات کی نسبت ضمنی یا وقت سے ہٹ کر ہونے والے انتخابات میں ووٹنگ کی شرح ہمیشہ 35 سے 40 فیصد ہوتی ہے لیکن یونین کونسل 80 میں عوامی جوش و خروش سے نظر آتا ہے کہ عام انتخابات کے برابر60سے65فیصد ووٹ شرح ہو گی اور تینوں امیداواروں میں ملک جہانگیر انتخابی مہم میں سبقت حاصل تھی اگر اس کا اندازہ لگائیں تو ان کے حاصل کردہ ووٹوں کی تعداد 4500 سے5000ہزار کے قریب ہو نی چاہیے لیکن یہ تو انتخابی مہم تھی فیصلہ ووٹر نے مہر لگا کر کرنا کس کے حق میں ووٹ پول کرتے ہیں آج شام کو ہی زرلٹ کے بعد سامنے آجائے گا ۔

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -